حکومت عوام کا معیار زندگی بلند کرنے کے لئے پرعزم، وزیر خزانہ 

 حکومت عوام کا معیار زندگی بلند کرنے کے لئے پرعزم، وزیر خزانہ 

  

 اسلام آباد (این این آئی)وفاقی وزیر برائے خزانہ و ریونیو مفتاح اسماعیل نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت عوام کے معیار زندگی کو بلند کرنے کے لئے پرعزم ہے،سٹیک ہولڈرز بلا سود قرضوں کی فراہمی کو تیز کریں تاکہ عوام کو خود کفالت حاصل کرنے میں مدد مل سکے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ہفتہ کو کامیاب پاکستان پروگرام (کے پی پی) کے بارے میں اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں چیئرمین اخوت ڈاکٹر امجد ثاقب، صدر بینک آ ف پنجاب ظفر مسعود، سیکرٹری خزانہ اور سینئر افسران نے شرکت کی۔ وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے کہا کہ موجودہ حکومت پاکستان میں غربت کی صورتحال کو بہتر کرنے کے لئے پرعزم ہے اور کامیاب پاکستان پروگرام اس سلسلے میں ایک اچھا پلیٹ فارم ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس طرح کا پروگرام وزیراعظم شہباز شریف کے عوام کا معیار زندگی بلند کرنے کے وژن کے مطابق ہے۔ کامیاب پاکستان پروگرام پر دی گئی ایک جامع پریذنٹیشن میں اس بات پر روشنی ڈالی گئی کہ متعدد انتہائی موثر اقدامات کے ذریعے غربت کا خاتمہ اس پروگرام کا بنیادی مقصد ہے، یہ پروگرام معاشرے کے غریب طبقات کو بلا سود قرضوں کی فراہمی کو یقینی بناتا ہے، اس پروگرام میں غربت کے خاتمے کے لئے نیچے تک کا طریقہ استعمال کیا گیا ہے، صحت مند پاکستان، کامیاب ہنرمند، کم قیمت مکانات، کامیاب کسان اور کامیاب کاروبار کے پی پی کے اہم ستون ہیں، منصفانہ تقسیم کو یقینی بنانے کیلئے 2.85 ملین فی گھرانہ رکھا گیا ہے۔ وزیر خزانہ کو بتایا گیا کہ ماہانہ ادائیگیاں 1.7 سے دو ارب روپے تک پہنچ چکی ہیں۔ وزارت خزانہ نے سہ ماہی بنیادوں پر اس پروگرام کیلئے ہول سیل قرض دہندگان (WLs) کے طور پر کام کرنے کے لئے کمرشل بینکوں سے بولیاں طلب کیں،اب تک ایچ بی ایل، این بی پی، بی او پی، عسکری بینک، بینک اسلامی پاکستان اور پاکستان مارگیج ری فنانس کمپنی نے بولی کے عمل میں حصہ لیا ہے، مزید برآں، اخوت اور این آر ایس پی نے روپے تقسیم کئے ہیں۔ 71500 سے زیادہ مستفید ہونے والوں کو 11.2 ارب روپے تقسیم کئے گئے۔ وفاقی وزیر خزانہ اور محصولات نے اس پروگرام کی پیشرفت پر اطمینان کا اظہار کیا اور اس بات پر زور دیا کہ اس پروگرام کی دوبارہ جانچ پڑتال کی جانی چاہئے اور اس کے مطابق اس میں ترمیم کی جانی چاہئے تاکہ زیادہ سے زیادہ مؤثریت، شفافیت اور کارکردگی کو یقینی بنایا جا سکے۔ اس بات کو یقینی بنایا جانا چاہئے کہ قرضے آسانی سے مستحق لوگوں تک پہنچ جائیں جن کی نقل صفر ہو اور رسائی میں رکاوٹیں دور ہو جائیں۔ مزید برآں اگلی سہ ماہی کے لئے گارنٹی کا بروقت اجراء جلد از جلد شروع کیا جا سکتا ہے تاکہ بڑی تعداد میں قرض لینے والوں کی ضروریات کو پورا کیا جا سکے۔

 وزیر خزانہ 

مزید :

صفحہ آخر -