عمران خان کے کل جلسہ میں سرکاری وسائل کے استعمال کا نوٹس لیا جائے

  عمران خان کے کل جلسہ میں سرکاری وسائل کے استعمال کا نوٹس لیا جائے

  

صوابی (بیورورپورٹ)عوامی نیشنل پارٹی (اے این پی) کے سابق صوبائی جنرل سیکرٹری محمد سلیم خان ایڈووکیٹ نے ضلعی انتظامیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ پیر سولہ مئی کوسابق وزیر اعظم و پی ٹی آئی کے چیر مین عمران خان کے ہونے والے جلسہ عام کے لئے سرکاری وسائل بروئے کار لانے کا نوٹس لیا جائے۔ورنہ صوابی کے عوام آج کرنل شیر خان چوک صوابی میں احتجاج پر مجبور ہو جائیں گے۔اس سلسلے میں انہوں نے صوابی کے ڈپٹی کمشنر کے نام ایک کھلے خط میں مطالبہ کیا ہے کہ صوابی کے غریب باشندوں کو یہ یقین دلانے کے لیے ''تیز اعلیٰ سطحی انکوائری'' شروع کی جائے۔ ضلع کو کسی ایک سیاسی جماعت (پاکستان تحریک انصاف) کے مقاصد اور ڈیزائن پر خرچ نہیں کیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ ضلعی انتظامیہ کے علم میں ہے کہ سابق وزیراعظم اور پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان پیر کو صوابی کرکٹ گراؤنڈ گوہاٹی میں عوامی اجتماع سے خطاب کے لیے ضلع آرہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ سوشل میڈیا پر یہ خبریں گردش کر رہی ہیں کہ کے پی حکومت، وزراء اور سابق سپیکر قومی اسمبلی اس عوامی اجتماع کو کامیاب بنانے کے لیے مختلف سرکاری محکموں جیسے اریگیشن، ریونیو، کمیونیکیشن اینڈ ورکس اور پبلک ہیلتھ کے افسران پر دباؤ ڈال رہے ہیں۔.''اگر وہ (پبلک سیکٹر کے ملازمین) ضلع میں اپنا کام جاری رکھنا چاہتے ہیں تو انہیں اجتماع کے لیے لاجسٹک انتظامات کرنا ہوں گے جیسے کہ ایک بہت بڑا اسٹیج بنانا، ساؤنڈ سسٹم اور بیٹھنے کے انتظامات، اس کے باوجود انہیں مزدوروں کو ٹرانسپورٹ کی سہولت فراہم کرنی چاہیے۔ پی ٹی آئی، ''انہوں نے کہاانہوں نے کہا کہ بل بورڈز پر جو فلیکس آویزاں کیے گئے ہیں وہ ایک ہی سائز اور رنگ کے ہیں اور ایک ہی پرنٹنگ پریس سے پرنٹ کیے گئے ہیں لیکن سب سے عجیب بات یہ ہے کہ بل بورڈز کے فلیکسز پر پرنٹنگ پریس کا نام ہی نہیں ہے۔اصولوں اور طریقہ کار کے مطابق پرنٹنگ پریس عام طور پر فلیکس کے کونے پر اپنا نام اور لوگو لگاتا ہے۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ یہ تمام فلیکس ایک پریس سے تعلق رکھنے والے شخص نے بنائے ہیں جو اپنا نام صیغہ راز میں رکھنا چاہتا ہے اور یہ کوئی سرکاری اہلکار ہو سکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ بھی واضح ہے کہ تمام فلیکسز کا سائز ایک جیسا ہے اور ان سب پر سابق سپیکر اسد قیصر، شہرام خان (وزیر)، عاقب اللہ (ایم پی اے) اور تحصیل صوابی کے ناظم عطاء اللہ خان کی تصاویر ہیں اور ان کی تصاویر نہیں ہیں۔ ان بل بورڈز پر دیگر عہدیدار بھی آویزاں ہیں جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ کچھ غیر قانونی اور بے ایمانی کی سرگرمیاں جاری ہیں۔کرپشن فری پاکستان کی مہم چلانے والے غریب ضلع کے وسائل اور مالیات کا بے دریغ استعمال کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ خبریں ہر طرف گردش کر رہی ہیں اور ہم اسے عام لوگوں کے خزانے پر ڈکیتی سمجھتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ڈپٹی کمشنر غریب عوام کے ٹیکسوں سے ہونے والے حقوق اور محصولات کا نگہبان ہے۔ اگر ''انصاف کے داعی'' غریب عوام کے مالی وسائل کو غیر قانونی اور شرمناک طریقے سے استعمال کرتے ہیں تو اس کے لیے آپ کے ساتھ ساتھ دیگر حکام کو جوابدہ ہونا چاہیے۔انہوں نے خبردار کیا کہ اگر ضلعی انتظامیہ ایسا کرنے میں ناکام رہی تو وہ ضلع کی اپوزیشن جماعتوں، پی ڈی ایم، وکلاء، طلباء، سول سوسائٹی، صحافیوں اور عام لوگوں سے درخواست کریں گے کہ وہ بدعنوانی کے خلاف آگے آئیں اور 15 مئی کو کرنل شیر خان چوک صوابی میں احتجاج کریں۔ 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -