حکومت نے پڑھے لکھے نابینا افراد کو در در کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور کردیا، ذکر اللہ مجاہد

          حکومت نے پڑھے لکھے نابینا افراد کو در در کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ...

  



لاہور (پ ر) امیر جماعت اسلامی لاہور ڈاکٹر ذکر اللہ مجاہد نے کہا ہے کہ سابقہ ادوار کی طرح موجودہ حکومت بھی نابینا افراد کو نوکریاں دینے کی بجائے سٹرکوں پر دھکے کھانے پر مجبور کررہی ہے۔تبدیلی سرکار کی ریاست مدینہ میں ہزاروں پڑھے لکھے نابینا افراد ڈگریاں لے کر در در کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہیں اور اس سردی میں اپنے حقوق کیلئے سڑکوں پر موجود ہیں جو موجودہ حکمرانوں کیلئے باعث شرم ہے۔ حکمران نابینا افراد کے جائز اور آئینی مطالبات کو تسلیم کرتے ہوئے ان کو نوکریاں دیں اور ڈیلی ویجز ملازمین کو مستقل کریں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گونر ہاوس کے سامنے نابینا افراد کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر جنرل سیکرٹری وکلاء ونگ جماعت اسلامی لاہور نصراللہ اولکھ، صدر اسلامک لائرز مومنٹ عبدالخالق، ملک کے ممتاز وکیل محمد یونس میوایڈووکیٹ، قائم مقام صدر جے آئی یوتھ لاہور قدیر شکیل اور وکلا برداری کے نمائندوں اور جے آئی یوتھ لاہور کے رہنماں موجود تھے۔

ذکر اللہ مجاہد نے مزید کہا کہ دین اسلام نے کسی شخص کے جسمانی نقص یا کمزوری کی بنا پر اُس کی عزت و توقیر اور معاشرتی رُتبہ کو کم کرنے کی ہرگز اجازت نہیں دی بلکہ جا بجا ایسے واقعات اور احکامات موجود ہیں جن کی بنیاد پر اللہ اور اس کے رسول صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ایسے لوگوں کو دوسرے انسانوں کی نسبت زیادہ عزت بخشی ہے مگر بدقسمتی سے ریاستِ مدینہ کی مثالیں دینے والوں کے اقتدار میں نابینا افراد اپنے بنیادی انسانی حقوق کے لیے سردی میں سڑکوں پر احتجاج کرنے پر مجبور ہیں۔

مزید : میٹروپولیٹن 1