لاپتہ ہونے والی دبئی کی دو شہزادیوں کا حیران کن قصہ

لاپتہ ہونے والی دبئی کی دو شہزادیوں کا حیران کن قصہ
لاپتہ ہونے والی دبئی کی دو شہزادیوں کا حیران کن قصہ

  



لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) چند ماہ قبل دبئی کے کھرب پتی حکمران شیخ مختوم کی اہلیہ شہزادی حیاءاپنے دو بچوں سمیت متحدہ عرب امارات سے فرار ہوکر برطانیہ چلی گئی جہاں اب اس نے طلاق، بچوں کی حوالگی اور دیگر معاملات کے حوالے سے عدالت میں مقدمہ دائر کر رکھا ہے۔ میل آن لائن کے مطابق امکان ظاہر کیا جا رہا ہے کہ شیخ مختوم اور شہزادی حیاءکی اس عدالتی لڑائی میں دبئی کی دو لاپتہ شہزادیوں کا قصہ بھی منظرعام پر آ جائے گا کہ آخر ان دونوں کے ساتھ کیا ہوا۔ ان میں ایک شہزادی شمسہ ہیں اور دوسری شہزادی لطیفہ۔یہ دونوں شہزادیاں شیخ مختوم کی بیٹیاں ہیں۔ ان کی ماں الجیریا کی خاتون شہزادی حوریہ احمد لیمارا تھیں، جبکہ شہزادی حیاء، جو اردن کے شاہی خاندان سے تعلق رکھتی ہے، ان کی سوتیلی ماں ہے۔

شہزادی شمسہ کو آخری بار 2000ءمیں برطانیہ میں دیکھا گیا تھا۔ وہ وہاں اپنے باپ کے عالیشان محل نما گھر میں رہائش پذیر تھی جہاں سے وہ فرار ہو گئی۔ 6ہفتے روپوش رہنے کے بعد بالآخر اسے کیمبرج میں ایک سڑک سے پکڑ لیا گیا اور ایک نجی طیارے میں واپس متحدہ عرب امارات منتقل کر دیا گیا۔ اس کے بعد سے اس کے متعلق کوئی خبر نہیں آئی کہ اس کا انجام کیا ہوا۔ شہزادی لطیفہ 2018ءمیں ایک سابق فرانسیسی جاسوس کی مدد سے متحدہ عرب امارات سے فرار ہوئی۔ وہ ایک کشتی میںسوار ہو کر بھارت کے ساحلی شہر گوا پہنچنے کی کوشش کر رہی تھی جہاں سے اسے کسی مغربی ملک جانا تھا لیکن بھارت پہنچنے سے پہلے ہی اماراتی حکومت نے ان کی کشتی کا سراغ لگا لیا اور بحر ہند سے شہزادی لطیفہ کو پکڑ کر واپس متحدہ عرب امارات پہنچا دیا گیا۔ اس کے بعد سے اس کی بھی کوئی خبر نہیں آئی۔

شہزادی حیاءکا کہنا ہے کہ اس نے اپنی ان دو سوتیلی بیٹیوں کا انجام دیکھ کر ملک سے فرار ہونے کا فیصلہ کیا تاکہ اپنے بچوں کو اس طرح کے انجام سے بچا سکے۔ انسانی حقوق کے کارکن مطالبہ کر رہے ہیں کہ شیخ مختوم اور شہزادی حیاءکے مقدمے میں شہزادی شمسہ اور شہزادی لطیفہ کو بطور گواہ برطانوی عدالت میں طلب کیا جائے تاکہ ان کے متعلق حقیقت معلوم ہو سکے۔

مزید : برطانیہ