معروف شاعرخاور رضوی کا یومِ وفات(15نومبر)

معروف شاعرخاور رضوی کا یومِ وفات(15نومبر)
معروف شاعرخاور رضوی کا یومِ وفات(15نومبر)

  

خاور رضوی:

ان کااصل نام سید سبط حسن رضوی تھا۔ وہ یکم جون 1938ءکو احمد پور لمہ میں پید اہوئے۔ارو شعر و ادب میں اہم مقام رکھتے ہیں۔ پنجاب یونیورسٹی میں شعبہ تدریس سے وابستہ رہے۔ ان کا انتقال 15نومبر 1981ءمیں ہوا۔

نمونۂ کلام

دل ہی دل میں گھٹ کے رہ جاؤں یہ میری خو نہیں 

آج اے آشوب دوراں میں نہیں یا تو نہیں 

سنگ کی صورت پڑا ہوں وقت کی دہلیز پر 

ٹھوکروں میں زندگی ہے آنکھ میں آ  نسو نہیں 

شب غنیمت تھی کہ روشن تھے امیدوں کے خطوط 

دن کے صحرا میں کوئی تارا کوئی جگنو نہیں 

چار جانب یہ سجے چہرے ہیں یا کاغذ کے پھول 

رنگ کے جلوے تو ہیں لیکن کہیں خوشبو نہیں 

تیری رحمت کا نہیں ہر چند میں منکر مگر 

سر پہ جو چڑھ کر نہ بولے وہ کوئی جادو نہیں 

مصلحت ہے جن کا مسلک وہ مرے بھائی کہاں 

جو نہ اٹھیں میرے دشمن پر مرے بازو نہیں 

شاعر: خاور رضوی

Dil   Hi   Dil   Men   Ghutt   K   Reh   Jaaun   Yeh   Meri   Khoo   Nahen

Aaaj   Ay   Ashob-e-Doraan   Main   Nehen   Ya   Tu   Nahen

 Sang   Ki   Soorat   Parra   Hun   Waqt   Ki   Daihleez   Par

Thokron   Men   Zindagi   Hay   Aankh   Men   Aansu   Nahen

 Shab   Ghaneemat   Thi   Keh   Roshan   Thay   Umeedon   K   Khatoot

Din   K   Saihraa   Men   Koi   Taara    ,   Koi   Jugnu   Nahen

 Chaar   Jaanib   Yeh   Sajay   Chehray   Hen   Ya   Kaaghaz   K   Phool

Rang   K   Jalway   To   Hen   Lekin   Kahen   Khushboo   Nahen

 Teri   Rehmat   Ka   Nahen   Harchand   Main    Munkir   Magar

Sar   Pe   Jo   Charrh   Kar   Na   Bolay   Wo   Koi   Jaadoo   Nahen

 Maslihat   Hay   Jin   Ka   Maslak   Wo   Miray   Bhai   Kahan

Jo   Na   Uthen    Meray   Dushman   Par   Miray   Baazu   Nahen

 Poet: Khawar   Rizvi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -