ماحول کے تحفظ کے لیے دنیا کے 150 سے زائد ممالک متفق،معاہدے طے پاگیا

ماحول کے تحفظ کے لیے دنیا کے 150 سے زائد ممالک متفق،معاہدے طے پاگیا
ماحول کے تحفظ کے لیے دنیا کے 150 سے زائد ممالک متفق،معاہدے طے پاگیا

  

روانڈا(مانیٹرنگ ڈیسک)برطانوی خبر رساں ادارے کے مطابق زمین کے ماحول کے تحفظ کے لیے دنیا کے 150 سے زیادہ ممالک نے ہائیڈروفلورو کاربن یعنی ماحول کے تحفظ کے لیے دنیا کے 150 سے زیادہ ممالک میں معاہدہ طے پاگیا ہے۔

روانڈا میں ہونے والے اجلاس میں طے پانے والے اس نئے معاہدے کو ایک ’تاریخی‘ قرار دیا جا رہا ہے۔یہ بھی سامنے آیا ہے کہ اس معاہدے میں شریک ممالک نے مونٹریال پروٹوکول میں ایک مشکل ترمیم پر بھی اتفاق کیا جس کے تحت ترقی یافتہ ممالک غریب ممالک سے پہلے ہائیڈروجن، فلورین اور کاربن ڈائی آکسائیڈ کے استعمال کو کم کریں گے۔ ان ممالک سے کہا گیا ہے کہ وہ 2019 سے اس پر عمل درآمد شروع کریں۔

چین ایچ ایف سی گیسوں کو استعمال کرنے والے ممالک کی فہرست میں پہلے نمبر پر ہے،دیگر ترقی پذیر ممالک جن میں انڈیا، پاکستان، ایران، عراق اور خلیجی ممالک شامل ہیں کو سنہ 2028 تک ان گیسوں کا استعمال ترک کرنے کے لیے مہلت دی گئی ہے۔

خیال رہے کہ چین ایچ ایف سی گیسوں کو استعمال کرنے والے ممالک کی فہرست میں پہلے نمبر پر ہے۔ وہ سنہ 2029 میں اپنی پیداوار میں کمی کرے گا۔جبکہ انڈیا کچھ تاخیر سے 2032 میں 10 فیصد کمی سے ساتھ ان گیسوں کے استعمال کو کم کرے گا۔اگر اس معاہدے پر صحیح معنوں میں عمل کیا جارتا ہے تو عالمی حدت میں بڑی حد تک کمی ہوگی۔ ماہرین کا اندازہ ہے کہ اس معاہدے پر عمل سے سنہ 2050 تک ک±رہ ارض کے ماحول میں موجود 70 ارب ٹن کاربن ڈائی آکسائیڈ ختم کی جا سکتے گی۔

گذشتہ برس دسمبر میں پیرس میں ہونے والی ماحولیاتی کانفرنس میں تقریباً دو ہفتے کی سرتوڑ کوششوں کے بعد ماحولیات کا حتمی معاہدہ ہوا تھا جس کے تحت 2050 تک دنیا کے درجہ حرارت میں اضافے کو دو ڈگری تک محدود کرنے پر اتفاق کیا گیا تھا۔

خیال رہے کہ ہائیڈروجن، فلورین اور کاربن ڈائی آکسائیڈ وہ گیسز ہیں جو فریزرز، ایئر کنڈیشنرز اور سپریز میں بھی استعمال ہوتی ہیں۔ اور یہ عالمی حدت میں اضافے کی ایک اہم وجہ ہے۔

مزید :

ماحولیات -