حکمران بیرونی دورے کس وجہ سے کر رہے ہیں؟سراج الحق نے ایسی بات کہہ دی کہ حکومتی صفوں میں بے چینی پھیل جائے گی

حکمران بیرونی دورے کس وجہ سے کر رہے ہیں؟سراج الحق نے ایسی بات کہہ دی کہ ...
حکمران بیرونی دورے کس وجہ سے کر رہے ہیں؟سراج الحق نے ایسی بات کہہ دی کہ حکومتی صفوں میں بے چینی پھیل جائے گی

  



لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن)امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاہے کہ22کروڑ عوام حکومت کی معاشی پالیسیوں کی وجہ سےبےچینی اوراندیشوں کاشکارہیں لیکن حکمران ٹینشن کو کم کرنےکےلیےبیرونی دورےکررہےہیں،غربت،مہنگائی اوربےروزگاری میں ہوشربااضافہ ہورہاہے،لوگو ں کو لینےکےدینےپڑ گئے ہیں،حکومت کی معاشی پالیسی ”غریب کو نچوڑو اورآئی ایم ایف کو دو“کے مرکزی نقطہ کےگرد گھوم رہی ہے،جاگیردارانہ اورسرمایہ دارانہ سیاست نےعوام کا کچومر نکال دیاہے۔

منصورہ میں سیکرٹری جنرل جماعت اسلامی امیرالعظیم اورنائب امیرلیاقت بلوچ کےساتھ ملاقات کےموقع پرگفتگو کرتے ہوئےسینیٹرسراج الحق نےکہاکہ ایف اے ٹی ایف کے خطرات کم ہونے سے عوام کو کوئی فائدہ نہیں ہوا،معاشی اعشاریے مسلسل ناکامی اور زبوں حالی کی بھیانک تصویر پیش کر رہے ہیں،حکومت کا سب سے بڑا دعویٰ احتساب کرنے اور کرپشن پرقابوپانے کا تھامگرکرپشن مزیددو فیصد بڑھ گئی ہے،گذشتہ حکومتوں میں ناجائز کام کے لیےرشوت دیناپڑتی تھی اوراب جائز کام بھی رشوت کے بغیر نہیں ہوتا،مہنگائی آنے والے دو سالوں میں مزید 13 فیصد بڑھنے کی خبریں آ رہی ہیں جس سے عوام کے اوسان خطا ہو گئے ہیں۔ سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ حکومت احتساب میں مکمل طور پر ناکام اور بےبس نظر آتی ہے،نیب کومطلوب کئی لوگ حکومت کی صفوں میں بیٹھے ہیں جس سے یک طرفہ احتساب کے تاثر کو تقویت مل رہی ہے،پانامہ کے150ملزمان میں سے90کو حکومت کی طرف سے ایمنسٹی دیے جانے کے انکشاف نے احتساب کے غبارے سے ہوا نکال دی ہے۔ انہوں نے کہاکہ جب تک بے لاگ احتساب نہیں ہوتا اور لوٹی گئی دولت واپس قومی خزانے میں نہیں آتی،ملک و قوم کے ہاتھ کچھ نہیں آئےگا۔

مزید : قومی