ادویات کی خریداری کورونا مریضوں کا علاج، سروسز ہسپتال میں کروڑوں کی بے ضابطگیوں کا انکشاف

  ادویات کی خریداری کورونا مریضوں کا علاج، سروسز ہسپتال میں کروڑوں کی بے ...

  

 لاہور(جاوید اقبال) کرونا وائرس کے دوران سروسز ہسپتال اور سمزمیں ادویات کی خریداری اور مریضوں کے علاج میں کروڑوں روپے کی بے ضابطگیوں کا انکشاف ہوا ہے۔ڈائریکٹر جنرل آڈٹ پنجاب نے کرونا وائرس کی آڈٹ رپورٹ میں اس حوالے سے چشم کشا تفصیلات تحریر کی ہیں،جن میں کہا گیا ہے کہ 2019-20میں کرونا وائرس کی ادویات اور دیگر ساز و سامان دیگر ہسپتالوں کے مقابلے میں سر وسز ہسپتال میں کئی سو گنا زائد قیمت پر مہنگے داموں ساز و سامان خریدا گیا جبکہ کرونا وائر س کے دوران آپریشن تھیٹر بند تھے اس کے با وجود کروڑوں روپے کے سرجیکل ڈسپوزیبل کا غیر ضروری ساز و سامان خریدا گیا۔رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ کرونا کے دوران گنگا رام ہسپتال میں ایک مریض پر 16 ہزار کے حساب سے خرچہ آیا مگر سروسز ہسپتال میں ایک مریض پر ایک لاکھ چار ہزار روپے کا خرچہ آیا۔ رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ کرونا سے بچاؤکیلئے 370روپے کا ماسک خریدا گیا مگر سروسز ہسپتال میں یہی ماسک 1250سے 2800روپے تک خریدا گیا۔رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ 400گرام کاسینیٹائزر 5500میں خریدا گیا،ادویات کی خریداری کیلئے مختص فنڈز کے 10 کروڑ غیر قانونی طور پر سرجیکل میں منتقل کے گئے۔30صفحوں پر مشتمل آڈٹ رپورٹ میں کوروناء کیلئے فراہم کئے گئے فنڈز میں سروسز ہسپتال/سمز انتظامیہ کی جانب سے شدید مالی بے ضابطگیوں کے کئی انکشاف کئے گئے۔آڈٹ رپورٹ میں مزید بتایا گیا کہ سیکریٹری سپیشلائزڈ ہیلتھ کئیر اینڈ میڈیکل ایجوکیشن نے سروسزہسپتال/سمز انتظامیہ نے Account  Drawing  Specialized (SDA) کے 10 کروڑ غیر قانونی طور پر pLA میں رکھے جو کہ Policy SDA کی خلاف ورزی ھے۔ذرائع کاکہنا ہے کہ مالی سال کے خاتمے پر آڈٹ رپورٹ 21351500 کا انکشاف کرتی ھے جن کو انتظامیہ نے استعمال کیا اور نہ ہی سرکاری خزانے میں واپس جمع کروایا آڈٹ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہSDA Policy کے مطابق بقایا جات گزر ے ھوئے تصور ھوں گے۔ انتظامیہ نے غفلت برتتے ہوئے کوروناء کے لیے فراھم کی جانے والی رقم سے مختلف کنٹریکٹرز/فرمز سے سرجیکل ماسک اور سینیٹائزرز کی خرید بہت مہنگے نرخوں پر کی جس سے سرکاری خزانے کو  25,395,050 کا نقصان پہنچا۔آڈٹ رپورٹ میں اعتراض لگا کر سروسز ہسپتال/سمز انتظامیہ نے  282126 کی ادویات زیادہ مقدار میں بغیر کسی فوری ضرورت محکمہ صحت کی جاری کردہ ہدایات کی خلاف ورزی کرتے ہوئے خریدیں جو کہ استعمال بھی نہ ہو سکیں۔سمز انتظامیہ نے کرونا کیلئے کئی چیزیں کیبنٹ کمیٹی برائے کورونا وائرس کی منظوری کے بغیر  2893270 میں خریدتے ہوئے شدید مالی بے ضابطگیوں کیں۔رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ دوران آڈٹ حیران کن بات یہ تھی کہ کرونا کا زیادہ تر سامان من پسند کمپنیوں سے من پسند کوٹیشن پر مہنگے داموں خریدا گیا ہے مگر زیادہ تر کوٹیشن پر خریداری کا تاریخ ہی درج نہیں جس سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ بڑے پیمانے پر گھپلے ہوئے ہیں۔

سروسز ہسپتال

مزید :

صفحہ اول -