کوہاٹ میں واپڈا ملازمین کا احتجاج،نعرے بازی

کوہاٹ میں واپڈا ملازمین کا احتجاج،نعرے بازی

  

کوھاٹ (بیورو رپورٹ) کوہاٹ پیسکو محنت کشوں کا حقوق کے لیے احتجاج،حکومت کے خلاف اور مطالبات کے حق میں زبردست نعرے بازی،واپڈا کی نجکاری کے خواب دیکھنے والے کئی حاکم قصہ پارینہ بن گئے،موجودہ حکومت کی محنت کش پالیسیوں کی بھر پور مزمت کرتے ہیں،بجٹ میں سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ نہ کرنا آئی ایم ایف کے سامنے لیٹنے کے مترادف ہے،تنخواہوں میں مہنگائی کے تناسب میں اضافہ اور ایمپلائز سن کوٹے پر عمل درآمد کیا جائے۔احتجاجی مظاہرے سے ہائیڈرو یونین کے صوبائی وائس چئیر مین یونس شاہ،چیئر مین کوہاٹ ڈویڑن۔چیر مین ہائیڈرو یونین کوہاٹ ڈویڑن،فرمان اللہ ڈپٹی چیئرمین رورل ڈویڑن۔جنرل سیکریٹری واپڈا ہائیڈرویونین فوجی بادشاہ عباس رضا جنرل سیکریٹری رورل ڈویڑن۔رومان شاہ۔جنرل سیکریٹری کوہاٹ معصوم شاہ ڈپٹی سیکرٹری رورل ڈویڑن کوہاٹ شوکت خان‘ ڈپٹی وائس چیئرمین رورل برہان علی اور دیگر کا خطاب۔تفصیلات کے مطابق ہائیڈرو الیکٹرک لیبر یونین کوہاٹ ڈویڑن کے زیر اہتمام مطالبات کے حق میں ریلی نکالی گئی جس میں صوبائی رہنماؤں سمیت پیسکو کوھاٹ کے ملازمین اور محنت کشوں نے شرکت کی۔مظاہریں نے مطالبات پر مبنی پلے جارڈز اور بینرز اٹھا رکھے تھے اور انہوں نے مطالبات کے حق اور موجودہ حکومت کے خلاف شدید نعرے بازی کی۔۔مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے  صوبائی وائس چئیر مین ہائیڈرو الیکٹرک لیبر یونین یونس شاہ،چئیر مین کوہاٹ ڈویڑن داؤد خان،چئیر مین کوہاٹ ڈویڑن اور دیگر نے کہا کہ کئی حکمران آئے اور واپڈا کی نجکاری کے ارادے کے ساتھ قصہ پارینہ بن گئے۔رہنماوں نے کہا کہ کوئی مائی کا لعل واپڈا کی نجکاری اور محنت کشوں کو تقسیم کرنے میں کامیاب نہیں ہو سکتا انہوں نے کہا کہ ہائیڈرو یونین محنت کشوں کا ملکی سطح پر پلیٹ فارم ہے جہاں سے ملازمین کے حقوق کی ہر محاذ پر جنگ لڑی جاتی ہے۔ہائیڈرو یونین کے رہنماؤں نے تنخواہوں میں اضافہ نہ کرنے ایمپلائیز سن کوٹے پر عمل درآمد نہ کرانے،اور ملازمین کی کمی دور نہ کرنے پر حکومت کی۔مزمت کی۔مقررین نے حکومت پر زور دیا کہ ہوش کے ناخن لے اور ملازمین کے مطالبات پر پہلی فرصت میں عمل کرئے۔یونس شاہ،فوجی بادشاہ عباس رضا اور دیگر نے مطالبہ کیا کہ نجکاری کا خیال حکومت دل سے نکال دے،مہنگائی کے تناسب سے ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ کرئے،ملازمین کی بھارتی کا عمل مکمل کیا جائے اور ایمپلائیز سن کوٹے پر عمل کرایا جائے۔انہوں نے خبر دار کیا کہ حکومت کی طرف سے مطالبات پر خاموشی کی صورت میں ملک گیر احتجاج کرنے پر مجبور ہونگے

مزید :

پشاورصفحہ آخر -