ترے ہجراں سےصحبت کے علاوہ کچھ کروں|منصور آفاق |

ترے ہجراں سےصحبت کے علاوہ کچھ کروں|منصور آفاق |
ترے ہجراں سےصحبت کے علاوہ کچھ کروں|منصور آفاق |

  

ترے ہجراں سےصحبت کے علاوہ کچھ کروں

بھلاکیسے محبت کے علاوہ کچھ کروں

مرے اوپر یہ تیرا ہجر ہو جائے حرام

اگر کارِ مصیبت کے علاوہ کچھ کروں

کہاں کرتی ہے میرے عشق کی غیرت قبول

طوافِ سبز تربت کے علاوہ کچھ کروں

وہ آنکھیں جو مری خاطر تباہی بن گئیں

میں کیسے اُن کی غیبت کے علاوہ کچھ کروں

مری جاں یہ تصور بھی نہیں کرنا کبھی 

تری منشا و رغبت کے علاوہ کچھ کروں

شاعر: منصور آفاق

(شعری مجموعہ: دیوانِ منصور)

Tiray   Hijraan   Say   Sohbat   K   Ilaawa   Kucch   Karun

Bhalaa    Kaisay   Muhabbat   K   Ilaawa   Kucch   Karun

 Miray    Ooper   Yeh   Tira   Hijr   Ho   Jaaey   Haraam

Agar   Kaar-e-Museebat   K   Ilaawa   Kucch   Karun

 Kahan   Karti   Hay    Meray   Eshq   Ki   Ghairat   Qabool

Tawaaf-e-Sabz    Turbat   K   Ilaawa   Kucch   Karun

 Wo   Aankhen   Jo   Miri   Khaatir   Tabaahi   Ban   Gaen

Main   Kaisay   Un   Ki   Gheebat   K   Ilaawa   Kucch   Karun

Miri   Jaan   Yeh   Tasawwar   Bhi   Nahen   Karna   Kabhi

Tiri   Mansha -o-Raghbat   K   Ilaawa   Kucch   Karun

 Poet: Mansoor   Afaq

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -