فقیہہِ شہر کا دستِ دعا برائے فروخت|منصور آفاق |

فقیہہِ شہر کا دستِ دعا برائے فروخت|منصور آفاق |
فقیہہِ شہر کا دستِ دعا برائے فروخت|منصور آفاق |

  

فقیہہِ شہر کا دستِ دعا برائے فروخت

فلک کرائے پہ خالی، خدا برائے فروخت

ہے واعظانِ حرم کے قمار خانوں میں

کبھی مدینہ کبھی کربلابرائے فروخت

دعائیں دے کے تجھے ہم بھی خرید لائے تھے

کسی زمانے میں تو بھی تو تھا برائے فروخت

یہ خوش خطوں کا ہنر ہے ، یہ دلبروں کا طریق

ستم برائے محبت، وفا برائے فروخت

رُکے تھے گنجِ گلستاں میں ہم بھی کل منصور

کہیں تھے گل کہیں بادِ صبابرائے فروخت

شاعر: منصور آفاق

(شعری مجموعہ: دیوانِ منصور)

Faqeeh-e-Shehr   Ka   Dast-e-Dua   Baraa-e-Farokht

Falak   Karaay   Pe    Khaali   ,   Khuda   Baraa-e-Farokht

 Hay   Waaizaan-e-Haram   K   Qumaar   Khaanon   Men

Kabhi   Madeena   Kabhi   Karbalaa   Baraa-e-Farokht

 Duaaen   Day   K   Tujhay   Ham   Bhi   Kahreed   Laaey   Thay

Kisi   Zamaanay   Men    Tu   Bhi To Tha   Baraa-e-Farokht

 Yeh   Khush   Khaton   Ka   Hunar  ,  Yeh   Dilbaron   Ka   Tareeq

Sitam   Baraa-e-Muhabbat   ,  Wafa   Baraa-e-Farokht

 Rukay   Thay   Ganj-e-Gulsitaan   Men   Ham   Bhi   Kall   MANSOOR

Kahen   Thay   Gull   Kahen    Baad-e-Sabaa   Baraa-e-Farokht

 Poet: Mansoor   Afaq

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -