ہجر کی تیرہ لباسی نہیں دیکھی جاتی|منصور آفاق |

ہجر کی تیرہ لباسی نہیں دیکھی جاتی|منصور آفاق |
ہجر کی تیرہ لباسی نہیں دیکھی جاتی|منصور آفاق |

  

ہجر کی تیرہ لباسی نہیں دیکھی جاتی

صحن میں رات ذرا سی نہیں دیکھی جاتی

آدمی عجز کا اعجاز ہے ہر پہلو سے

کوئی بھی بات خداسی نہیں دیکھی جاتی

شام کے وقت میں ساحل پہ نہیں جا سکتا

مجھ سے دریا کی اُداسی نہیں دیکھی جاتی

دیکھتا کیسے میں کربل میں نبی کی اولاد

مجھ سے تو ریت بھی پیاسی نہیں دیکھی جاتی

طے شدہ وقت پہ منصور پہنچ جاتی ہے

موت کی فرض شناسی نہیں دیکھی جاتی

شاعر: منصور آفاق

(شعری مجموعہ: دیوانِ منصور)

Hijr   Ki   Teera   Libaasi   Nahen   Daikhi   Jaati

Sehn   Men   Raat   Zara   Si    Nahen   Daikhi   Jaati

 Aadmi   Ijz   Ka    Ejaz   Hay   Har   Pehlu   Say

Koi   Bhi    Baat   Khuda   Si   Nahen   Daikhi   Jaati

 Shaam   K   Waqt   Main   Saahil   Pe   Nahen   Ja   Skata

Mujh   Say   Darya   Ki   Udaasi   Nahen   Daikhi   Jaati

 

Daikhta   Kaisay   Main   Karball   Men   NABI   Ki   Aolaad

Mujh   Say   To    Rait   Bhi   Payaasi   Nahen   Daikhi   Jaati

 Tay   Shuda   Waqt   Pe   MANSOOR   Pahunch   Jaati  Hay

Maot   Ki   Farz   Shanaasi   Nahen   Daikhi   Jaati

 

Poet: Mansoor   Afaq

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -