میں کھل کے ہنس تو رہا ہوں فقیر ہوتے ہوئے|منور رانا |

میں کھل کے ہنس تو رہا ہوں فقیر ہوتے ہوئے|منور رانا |
میں کھل کے ہنس تو رہا ہوں فقیر ہوتے ہوئے|منور رانا |

  

میں کھل کے ہنس تو رہا ہوں فقیر ہوتے ہوئے

وہ مسکرا بھی نہ پایا امیر ہوتے ہوئے 

یہاں پہ عزتیں مرنے کے بعد ملتی ہیں

میں سیڑھیوں پہ پڑا ہوں کبیر ہوتے ہوئے 

نئے طریقے سے میں نے یہ یہ جنگ جیتی ہے

کمان پھینک دی ترکش میں تیر ہوتے ہوئے????

جسے بھی چاہئے مجھ سے دوائیں لے جائے

لٹا رہا ہوں میں دولت فقیر ہوتے ہوئے 

تمام چاہنے والوں کو بھول جاتے ہیں

بہت سے لوگ ترقی پذیر ہوتے ہوئے

شاعر: منور رانا

(شعری مجموعہ: جنگلی پھول؛سالِ اشاعت،2007)

Main   Khull   K   Hans   To   Raha   Hun   Faqeer   Hotay   Huay

Wo   Muskuraa    Bhi   Na   Paaya   Ameer   Hotay   Huay

 Yahan   Pe   Izzaten   Marnay   K   Baad   Milti   Hen

Main   Seerrhiun   Pe   Parra   Hun   Kabeer   Hotay   Huay

 Naey   Tareeqay   Say   Main   Nay   Yeh    Jang   Jeeti   Hay

Kamaan   Phaink   Di   Tarkash    Men   Teer   Hotay   Huay

 Jisay    Bhi    Chaahiay   Mujh   Say    Dawaaen    Lay   Jaaey

Lutaa    Raha    Hun   Main    Daolat    Faqeer   Hotay   Huay

 Tamaam   Chaahnay    Waalon   Ko   Bhool    Jaatay   Hen

Bahut   Say   Log   Taraqqi   Pazeer   Hotay   Huay

 Poet: Munawwar   Rana

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -