بے چین بہت پھرنا گھبرائے ہوئے رہنا| منیر نیازی|

بے چین بہت پھرنا گھبرائے ہوئے رہنا| منیر نیازی|
بے چین بہت پھرنا گھبرائے ہوئے رہنا| منیر نیازی|

  

بے چین بہت پھرنا گھبرائے ہوئے رہنا

اِک آگ سی جذبوں کی دہکائے ہوئے رہنا

چھلکائے ہوئے چلنا خوشبو لبِ لعلیں کی

اک باغ سا ساتھ اپنے مہکائے ہوئے رہنا

اس حسن کا شیوہ ہے جب عشق نظر آئے

پردے میں چلے جانا، شرمائے ہوئے رہنا

اک شام سی کر رکھنا کاجل کے کرشمے سے

اک چاند سا آنکھوں میں چمکائے ہوئے رہنا

عادت ہی بنا لی ہے تم نے تو منیر اپنی

جس شہر میں بھی رہنا اکتائے ہوئے رہنا

شاعر: منیر نیازی

(شعری مجموعہ: چھے رنگین دروازے)

Be   Chain   Bahut   Phirna   Ghabraaey    Huay   Rehna

Ik   Aag   Si   Jazbon   Ki   Dehkaaey    Huay   Rehna

 Chhalkaaey   Huay   Chalna   Khushboo   Lab-e-Laleen   Ki

Ik   Baagh   Sa   Saath   Apnay   Mehkaaey    Huay   Rehna

 Uss   Husn   Ka   Shaiwa   Hay   Jab   Eshq   Nazar   Aaey

Parday   Men   Chalay   Jaana  ,  Sharmaaey    Huay   Rehna

 Ik    Shaam    Si   Kar   Rakhna   Kaajal   K   Karishmay  Say

Ik   Chaand   Sa   Aankhon   Men   Chamkaaey    Huay   Rehna

 Aadat   Hi   Bana   Li    Hay   Tum    Nay   To   MUNEER   Apni 

Jiss   Shehr   Men   Bhi   Rehna   Uktaaey    Huay   Rehna

 Poet:Muneer   Niyazi 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -