گر غیر کے گھر سے نہ دلِ آرام نکلتا | مومن خان مومن|

گر غیر کے گھر سے نہ دلِ آرام نکلتا | مومن خان مومن|
گر غیر کے گھر سے نہ دلِ آرام نکلتا | مومن خان مومن|

  

گر غیر کے گھر سے نہ دلِ آرام نکلتا 

دم کاہے کو  یوں اے دلِ ناکام نکلتا  

کرتے جو مجھے یاد شبِ وصلِ عدو تم 

کیا صبح کہ خورشید نہ تا شام نکلتا 

  

تھی نوحہ زنی دل کی جنازے پہ ضروری 

شاید کہ وہ گھبرا کے سرِ بام نکلتا 

کانٹا سا کھٹکتا ہے کلیجے میں غمِ ہجر 

یہ خار نہیں دل سے گلِ اندام نکلتا 

حوریں نہیں مومنؔ کے نصیبوں میں جو ہوتیں 

بت خانے ہی سے کیوں یہ بد انجام نکلتا 

شاعر: مومن خان مومن

(شعری مجموعہ: دیوانِ مومن؛مرتبہ،انوارالحسن،سالِ اشاعت،1971)

Gar   Ghiar   K   Ghar   Say   Na   Dil   -e-Araam    Nikalta

Dam   Kaahay   Ka   Yun    Ay   Dil e-e-Nakaam    Nikalta

 Kartay   Jo   Mujhay   Yaad   Shab-e-Wasl   Udu   Tum

Kaya   Subh   K   Khursheed   Na   Ta   Shaam    Nikalta

 Thi    Noha   Zani   Dil   Ki   Janaazay   Pe   Zaroori

Shayad   Keh   Wo   Ghabraa   K   Sar-e-Baam    Nikalta

 Kaanta   Sa   Khatakta   Hay   Kalaijay   Men   Gham-e-Hijr

Yeh   Khaar   Nahen   Dil   Say   Gull-e-Andaam    Nikalta

 Hooren   Nahen   MOMIN   K   Naseebon   Men   Jo   Hoteen

But    Khaanay   Hi   Say   Kiun   Yeh    Bad   Anjaam    Nikalta

Poet: Momin   Khan   Momin

 

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -