پڑا جو عکس تو ذرہ بھی آفتاب بنا | میر انیس |

پڑا جو عکس تو ذرہ بھی آفتاب بنا | میر انیس |
پڑا جو عکس تو ذرہ بھی آفتاب بنا | میر انیس |

  

پڑا جو عکس تو ذرہ بھی آفتاب بنا

خدا کے نور سے جسمِ ابو تراب بنا

بِنائے روضۂ سرور جو کربلا میں ہوئی

ملک پکارے کہ اب خلد کا جواب بنا

جو آبرو کا ہے طالب تو کر عرق ریزی

یہ کشمکش ہوئی تب پھول سے گلاب بنا

مرے گناہوں کے دفتر کی ابتری کے لیے

نئے سیاق سے بگڑا ہوا حساب بنا

عمارتیں تو بنائیں خراب ہونے کو

اب اپنی قبر بھی او خانماں خراب بنا

یہ مشتعل ہوئی سینے میں آتشِ غمِ شاہ

کہ آہ سیخ بنی اور جگر کباب بنا

یہ غل تھا دیکھ کے دولھا دلھن کو خیمے میں

جو بے عدیل بنی ہے تو لاجواب بنا

ہوا پہ کیوں ہیں تنک مایگانِ بحرِ فنا

جو بڑھ گیا کوئی قطرہ تو وہ حباب بنا

فلک پہ نالۂ سوزاں نے آگ بھڑکائی

دھواں جو آہ کا نکلا مری، سحاب بنا

ترے سلام میں ہے مرثیے کا سارا لطف

انیس نظمِ غمِ شہ میں اک کتاب بنا

شاعر: میرانیس

(شعری مجموعہ: انیس کے سلام ؛مرتبہ،علی جواد زیدی،سالِ اشاعت،1981)

Parra   Jo   Aks   To   Zarra   Bhi   Aaftaab   Bana

Khuda   K   Noor   Say   Jism-e-ABU   TURAAB   Bana

 Binaa-e-Roza-e-Sarwar   Jo   Karbalaa   Men   Hui

MALAK    Pukaaray   Keh   Ab   Khuld   K   Jawaab   Bana

 Jo   Aabru   Ka   Hay   Taalib   To   Kar   Araq   Raizi

Yeh   Kashmaksh   Hui   Tab   Phool   Say   Gulaab    Bana

 Miray   Gunaahon   K   Daftar   Ki   Abtari   K   Liay

Naey   Sayaaq   Say   Bigrra   Hua   Hisaab   Bana

 Imaarten   To   Banaaen   Kharaab   Honay   Ko

Ab   Apni   Qabr   Bhi   O     Khanuma   Kharaab   Bana

 Yeh   Mushtaill   Hui   Seenay   Men    Aatish-e-Gham-e-SHAAH

Keh   Aah   Seekh   Bani   Aor   Jigar   Kabaab   Bana

 Yeh   Ghull   Tha   Daikh   K   Dulha   Dulhan   Ko    Khaimay   Men

Jo   Be   Adeel   Bani   Hay   To    La   Jawaab   Bana

 Hawa   Pe    Kiun   Hen   Tang   Mayagaan-e-Behr-e-Fanaa

Jo   Barrh    Gaya   Koi   Qatra   To   Wo   Kabaab   Bana

 Falak   Pe   Naala-e-Sozaan   Nay    Aag   Bharrkaai

Dhuwan   Jo   Aah   Ka   Nikla   Miri  ,   Sahaab   Bana

 Tiray   Salaam   Men   Hay   Marsiyay   Ka    Saara   Lutf

ANEES   Nazm-e-Gham-e-SHAH    Men   Ik   Kitaab   Bana

 Poet: Meer   Anees

 

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -