چھپانا اُن سے دل کو فائدہ کیا | میرمہدی مجروح |

چھپانا اُن سے دل کو فائدہ کیا | میرمہدی مجروح |
چھپانا اُن سے دل کو فائدہ کیا | میرمہدی مجروح |

  

چھپانا اُن سے دل کو فائدہ کیا

بھلا چھوڑے گی وہ بانکی ادا کیا

بپا ہے محشر میں اک تازہ محشر

رُخِ جاناں سے پردہ اُٹھ گیا کیا

کہا جب دل نہ لے جاؤ تو بولے

کہ میرا اور تیرا ہے جُدا کیا

نہ کہہ سکتے ہیں یار اُس کو نہ دشمن

نہیں معلوم ہے یہ ماجرا کیا

شاعر: میر مہدی مجروح

(شعری مجموعہ: دیوانِ مجروح؛سالِ اشاعت،1889)

Chhupaana   Un   Say   Dil   Ko   Faaida   Kaya

Bhala   Chorray   Gi   Wo   Baanki   Adaa   Kaya

 Bapaa   Hay   Mehshar   Men   Ik   Taaza   Mehshar

Rukh-e-Jaana   Say   Parda   Uth   Gaya   Kaya

 Kaha   Jab   Dil   Na   Lay   Jaao   To   Bolay

Keh   Mera   Aor   Tera   Hay   Judaa   Kaya

 Na   Keh   Saktay   Hen   Yaar   Uss   Ko   Na   Dushman

Nahen   Maloom   Hay   Yeh   Maajra   Kaya

 Poet: Meer    Mehdi   Majrooh

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -