ریٹائرمنٹ کے تین سال بعدکرپشن انکوائری کیسے ہوسکتی ہے:ہائیکورٹ

ریٹائرمنٹ کے تین سال بعدکرپشن انکوائری کیسے ہوسکتی ہے:ہائیکورٹ

  

ملتان (خصو صی  ر پو رٹر) ہائیکورٹ ملتان بینچ کے جسٹس سلطان تنویر احمد(بقیہ نمبر8صفحہ6پر)

 نے محکمہ لوکل گورنمنٹ و کمیونٹی ڈویلپمنٹ پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے قرار دیا ہے کہ کس طرح 3 سال قبل ریٹائر ہونے والے اہلکار کے خلاف کرپشن کی انکوائری کی جا سکتی ہے۔ فاضل عدالت نے محکمہ سے جواب بھی طلب کر لیا ہے۔ فاضل عدالت میں بلدیہ مظفرگڑھ کے سابق چیف آفیسر نور محمد درخواست دائر کی تھی کہ وہ سال 2018 میں ملازمت سے ریٹائر ہو گیا اور اس وقت اس کے خلاف نہ تو کرپشن کا کوئی الزام موجود تھا اور نہ ہی اس کے خلاف کوئی آڈٹ پیرا تھا لیکن اب 3 سال بعد اس پر ساڑھے 7 کروڑ کی کرپشن کا الزام عائد کر دیا گیا ہے۔ فاضل عدالت کے استفسار پر لا آفیسر نے بتایا کہ قانون کے مطابق کسی ملازم کی ریٹائرمنٹ کے 2 سال کے اندر کرپشن یا الزام کی نشاندہی کی جا سکتی ہے۔

ہائیکورٹ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -