پاور کمپنیاں، معاہدے کی پابندی کو اولین ترجیح دیں: امتیاز شیخ 

پاور کمپنیاں، معاہدے کی پابندی کو اولین ترجیح دیں: امتیاز شیخ 

  

       کراچی (اسٹاف رپورٹر) وزیر توانائی سندھ امتیاز احمد شیخ نے آج محکمہ توانائی سندھ کے دفتر میں تھر پاور پراجیکٹ میں کام کرنے والی کمپنیوں میسرز سائنو سندھ ریسورسز اور شنگھائی الیکٹرک کے افسران کے ساتھ اجلاس میں واضح ہدایات دی ہیں کہ سندھ حکومت اپنے لوگوں کی صحت و سلامتی اور بہبود کو ہر منصوبے سے زیادہ اہم سمجھتی ہے اور سندھ حکومت نے تھر پاور پراجیکٹ میں کام کرنے والی تمام کمپنیوں کو پابند کیا ہے کہ وہ اپنے پراجیکٹس میں مقامی لوگوں کی زندگی کے تحفظ کے ساتھ ساتھ ان کی بہبود کے لئے بھی مناسب اقدامات عمل میں لائیں۔ انہوں نے کہا کہ پاور پراجیکٹ سائٹس سے بیدخل ہونے والے افراد کو نئی جگہ پر منتقلی اور منتقلی کے مقام پر گھر کا انتظام اور سڑک، پانی، بجلی، اسکول، مسجد، مندر اور دیگر بنیادی سہولتوں کی فراہمی بھی معاہدے کے مطابق پاور کمپنیوں کی ذمہ داری ہے نیز پاور پراجیکٹس سے متاثر اور بیدخل ہونے والے افراد کی صحت و سلامتی اور انہیں کارپوریٹ سوشل رسپانسیبیلیٹی کے بین الاقوامی اصولوں کے مطابق پروجیکٹس میں مقامی افراد کو مناسب روزگار کی فراہمی بھی پاور کمپنیوں کی ذمہ داری میں شامل ہے اور سندھ حکومت اپنے لوگوں کے حقوق کے تحفظ کو اولین ترجیح دیتی ہے اور کوئی بھی منصوبہ لوگوں کی صحت و سلامتی اور بہبود سے بڑھ کر نہیں ہوسکتا۔وزیر توانائی سندھ نے پاور کمپنیوں کو ہدایات دیں اور تنبیہہ کی کہ کمپنیاں اپنی زمہ داریوں کو پورا کرنے میں بالکل تاخیر نہ کریں۔ انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت توانائی منصوبوں میں کام کرنے والی کمپنیوں کو ہر ممکن معاونت فراہم کررہی ہے اور ہماری پوری کوشش ہے کہ پاور کمپنیاں اپنے پراجیکٹس کو بروقت مکمل کریں اور مکمل استفادہ کریں لیکن معاہدے کے مطابق مقامی لوگوں کی صحت و سلامتی اور بہبود کے کاموں میں بھی کسی قسم کی غفلت اور تاخیر نہ کی جائے۔ا نہوں نے ہدایت کی کہ پاور کمپنیوں میں کام کرنے والے تمام کارکنوں کے سیفٹی اور سیکیورٹی کو یقینی بنایا جائے۔ اور پاور پراجیکٹس میں جن مقامی لوگوں کو روزگار فراہم کی گئی ہے ان کی فہرست بھی محکمہ توانائی سندھ کو پیش کی جائے۔

مزید :

صفحہ آخر -