بجلی مہنگی ہونے کی وجہ ماضی کے منصوبے ہیں ، حماد اظہر

بجلی مہنگی ہونے کی وجہ ماضی کے منصوبے ہیں ، حماد اظہر
بجلی مہنگی ہونے کی وجہ ماضی کے منصوبے ہیں ، حماد اظہر

  

اسلام آباد ( ڈیلی پاکستان آن لائن)  وفاقی وزیر حماد اظہر نے کہا کہ  سال 2013 سے 2018  تک مہنگے معاہدے کئے گئے ، ماضی کے منصوبوں کی وجہ سے بجلی مہنگی ہو رہی ہے ۔

وفاقی وزیر برائے توانائی حماد اظہر نے پریس انفارمیشن ڈیپارٹمنٹ ( پی آئی ڈی ) میں نیوز کانفرنس میں بتایا کہ ماضی کی حکومتوں نے کیپسٹی پیمنٹ پر معاہدے کئے یعنی جتنی بھی بجلی پیدا کی جا رہی ہے ، ہم وہ خریدیں یا نہ خریدیں ہمیں اس کی ادائیگی کرنا ہو گی ، ہر سال اس کا کرایہ بڑھتاجا رہا ہے ۔

حماد اظہر نے کہا کہ گردشی قرضوں کا بوجھ عوام اور حکومت اٹھا رہے ہیں ، انڈسٹری پر پیک آور لاگو نہیں ہوں گے ،ساری دنیا میں گیس کا بحران ہے ،  ہم اپنے سسٹم میں ایل این جی اتنی لے آئے ہیں کہ مشکلات نہ ہوں ، گزشتہ برس 11 کارگو تھے، ہم نے اس سال 10 کارگو محفوظ کر لئے ہیں ، صرف ایک کارگو کا فرق ہے ، ایل این جی ہمارا مسئلہ نہیں،ہمارا مسئلہ مقامی سطح کی گیس ہے جس میں ہر سال 9فیصد کے حساب سے کمی ہو رہی ہے ۔

حماد اظہر نے کہا کہ ہم کو کہا جاتا ہے کہ آپ ایل این جی زیادہ خرید کر پائپوں میں ڈال دیں ، ہم ایک خاص حد سے زیادہ گیس پائپ میں نہیں ڈال سکتے ، روس کے ساتھ گیس پائپ لائن کی کپیسٹی زیادہ ہوگی اس میں گیس زیادہ آسکتی ہے ، اس وقت بھی گیس میں 40 ارب تک کا نقصان ہو رہا ہے ۔

حماد اظہر نے کہا کہ  بجلی کےگھریلوصارفین کیلئےرعایتی پیکج دےرہےہیں،  موجودہ حکومت گردشی قرضوں میں کمی لانےکیلئےکوشاں ہے،ہم نے بجلی کی کھپت بڑھانے کیلئے صنعتی پیکج متعارف کرایا۔

مزید :

قومی -بزنس -