لندن میں فیض کلچر فاﺅنڈیشن کے زیر اہتمام فیض امن میلے کا انعقاد ، اعتزاز احسن اور عاصمہ جہانگیر کی خصوصی شرکت

لندن میں فیض کلچر فاﺅنڈیشن کے زیر اہتمام فیض امن میلے کا انعقاد ، اعتزاز ...
لندن میں فیض کلچر فاﺅنڈیشن کے زیر اہتمام فیض امن میلے کا انعقاد ، اعتزاز احسن اور عاصمہ جہانگیر کی خصوصی شرکت

  


لندن(عرفان الحق)فیض کلچر ل فاونڈیشن کے زیر اہتمام فیض امن میلے کا انعقاد کیا گیا جس میں پاکستان پیپلز پارٹی کے راہنما سینیٹر اعتزاز احسن، عاصمہ جہانگیر، سلیمہ ہاشمی نے خصوصی طور پر شرکت کی جبکہ میلے میں بڑی تعداد میں مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے افراد نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔ 

تفصیلات کے مطابق تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مقررین اعتزاز احسن، سلیمہ ہاشمی اور، عاصمہ جہانگیر کا کہنا تھا کہ فیض احمد فیض نے اپنی شاعری کے ذریعے امن اور محبت کا پیغام عام کیا۔ آج کے دور میں جہاں ہر طرف نفرت عام ہے ایسے موقع پر اپنی نئی نسل تک فیض احمد فیض کا پیغام پہنچانے کی اشد ضرورت ہے۔

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

مقررین کا کہنا تھا کہ فیض احمد فیض نے صرف شاعری ہی نہیں کی بلکہ اپنی شاعری سے اس وقت لوگوں کے اندر ایک انقلاب پیدا کیا جس کی وجہ سے انہیں قید و بند کی صعبتیں بھی برداشت کرنا پڑیں۔

فیض میلے میں پاکستان کے نامور نوجوان گلوکار شجاعت علی خان اور روشن آرا م±نی نے اپنی دل سوز انداز میں فیض احمد فیض اور دیگر شعراءکا کلام پیش کرکے حال میں موجود افراد سے خوب داد وصول کی۔

میلے کی خاص بات فیض احمد فیض کے کلام رقص تھا جس نے حاضرین محفل پر اپنا سحر طاری کردیا۔ رقاصاو¿ں نے اپنے خوب صورت انداز میں فیض احمد فیض کے انقلابی کلام پر اپنی اداو¿ں سے خوب داد وصول کی ۔

روزنامہ پاکستان کی خبریں اپنے ای میل آئی ڈی پر حاصل کرنے اور سبسکرپشن کیلئے یہاں کلک کریں

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سلیمہ ہاشمی کا کہنا تھا کہ دنیا بھر میں فیض احمد فیض کا پیغام عام ہو رہا ہے۔ پیپلز پارٹی کے راہنما اعتزاز احسن کا کہنا تھا آج کے دور میں فیض احمد فیض کے پیغام کو عام کرنے کی اشد ضرورت ہے۔ ایوب اولیا نے کہا کہ فیض احمد فیض نے اپنی عوام کےلئے بے پناہ جدوجہد کی جس کےلئے انہیں جیلوں میں بھی جانا پڑا۔ فیض کلچرل فاونڈیشن کے چیئرمین اکرم دورانی کا کہنا تھا کہ آج کے دور میں بڑھتی ہوئی انتہا پسندی کو روکنے کےلئے فیض احمد فیض کا پیغام عام کرنے کی ضرورت ہے۔

مزید : برطانیہ


loading...