محترمہ فاطمہ جناح کے زیراستعمال گاڑیاں اصل حالت میں لانے کیلئے ماہرین کے حوالے کردی گئیں

محترمہ فاطمہ جناح کے زیراستعمال گاڑیاں اصل حالت میں لانے کیلئے ماہرین کے ...
محترمہ فاطمہ جناح کے زیراستعمال گاڑیاں اصل حالت میں لانے کیلئے ماہرین کے حوالے کردی گئیں

  


کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) زیرنظر دونوں گاڑیاں مادرملت فاطمہ جناح کے زیراستعمال تھیں جنہیں انتہائی ابتر حالت میں اُنہیں چھوڑدیاگیا لیکن اب محترمہ فاطمہ جناح کے زیر استعمال 2 تاریخی گاڑیاں اپنی اصل حالت میں واپس لانے کے لیے ماہرین کے حوالے کردی گئی ہیں، یہ اقدام حکومت پاکستان کی جانب سے اٹھایا گیا ہے۔

نجی ٹی وی کے مطابق محترمہ فاطمہ جناح کے زیر استعمال دونوں گاڑیاںسنہرے رنگ کی 1955 کیڈیلاک سیریز 62 کنورٹ ایبل اور سفید رنگ کی 1965 مرسڈیز بینز 200 زنگ آلود حالت میں نیشنل میوزیم کے گیراج میں موجود تھیں۔ ونٹاج اینڈ کلاسک کار کلب کے بانی محسن اکرام نے بتایا کہ ان کی خواہش تھی کہ گاڑیوں کو بہتر حالت میں واپس لایاجائے لیکن ابتدائی طورپر حکومت کی طرف سے معاملہ سست روی کا شکار رہا لیکن اب وہ اسی گیراج میں ان گاڑیوں کی مرمت کریں گے۔ حسن اکرام نے 1992ءمیں موہٹہ پیلیس میں ان گاڑیوں کی نشاندہی کی تھی اور تب سے وہ حکومت پر زور دے رہے ہیں کہ ان گاڑیوں کو محفوظ کیا جائے۔

اپنی ٹیم کیساتھ گاڑیوں کی نگرانی کرنیوالے محسن اکرام نے بتایاکہ نیشنل میوزیم کے گیراج میں کام کرنے کے لیے پہلے گیراج کو درست حالت میں لانا ہوگا۔پاک ویلز کی رپورٹ کے مطابق محسن اکرام اور ان کی ٹیم کے تمام ہی رکن اس کام کے لیے کافی متحرک ہیں اور جلد از جلد ان گاڑیوں کو پرانے روپ میں بحال کر کے عجائب گھر کا حصہ بنانا چاہتے ہیں تاکہ مستقبل میں ان کی بہتر دیکھ بھال ہوسکے۔محسن اکرام نے بتایاکہ ان دونوں ہی گاڑیوں کو اصل سے قریب ترین حالت میں بحال کرنے کے بعد قائد اعظم ہاو¿س کی زینت بنایا جائے گاجبکہ دونوں گاڑیوں کی بحالی پر 2 کروڑ 30 لاکھ روپے کے اخراجات کا تخمینہ لگایا گیا تھا۔ حکومت کی جانب سے ٹیکس کی مد میں رعایت کے بعد اخراجات میں 1 کروڑ 50 لاکھ روپے تک کمی کی جاسکی ہے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...