سندھ کے جزائر پر نئے شہری کی تعمیر ہماری ملکیت پر قبضہ ہے: اسماعیل راہو 

سندھ کے جزائر پر نئے شہری کی تعمیر ہماری ملکیت پر قبضہ ہے: اسماعیل راہو 

  

 کراچی(اسٹاف رپورٹر)بھنڈار اورڈنگی جزائر پر نئے شہر تعمیر کرنے پرسندھ حکومت نے ردعمل میں کہا ہے کہ بھنڈار اور ڈنگی جزائر پر نئے شہر کی تعمیر اصل میں سندھ کی ملکیت پر قبضہ ہے۔صوبائی وزیر زراعت محمد اسماعیل راہو نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ وفاق نے بھنڈار اور ڈنگی جزائر پر نیا شہر تعمیر کرنے کے لیے سندھ سے مشاورت نہیں کی، وفاق کا سندھ کی ساحلی پٹی پر نیا شہر تعمیر کرنے کا خواب کبھی پورا نہیں ہوگا،سندھ حکومت کی اجازت کے بنا وفاق صوبے کے کسی بھی علاقے میں کچھ بھی نہیں بناسکتا، نیازی سرکار سے سنبھلتا پرانا پاکستان نہیں اور چلے ہیں نئے شہر تعمیر کرنے۔وفاق نے دو سال میں ترقیاتی بجٹ میں سندھ کو مکمل نظر انداز کیا ہے.انہوں نے کہاکہ پاکستان کے آئین کے مطابق 12 ناٹیکل مائل تک سمندری حدود سندھ حکومت کے دائرے میں آتی ہے۔وفاق کو سندھ کی زمینوں اور وسائل پر قبضہ کرنے  نہیں دیں گے، وفاق بھنڈار اور ڈنگی جزائر پر سندھ  کی اجازت کے بنا کوئی کام نہیں کرسکتا۔اسماعیل راہو نے کہا کہ وفاق سندھ بلوچستان کی ساحلی جزائرپرقبضہ کرنے کیلیے پاکستان آئی لینڈزڈولپمینٹ اتھا رٹی ایکٹ2020لارہی ہے جو قابل قبول نہیں۔وفاق صوبوں کی اجازت کے بنا اتھارٹی کیلیے رول 27(5) اے اور رو 27(8) 1973 میں ترمیم نہیں کرسکتا۔سمندری جزائروں پر شہر تعمیر ہوئے تو وہ غیر ملکیوں کا اڈہ بن جائے گا۔صوبائی وزیر نے کہا کہ ساحلوں پر شہر آباد کرنے سے مچھلی سمیت تمام آبی حیات اور تمر کے جنگلات ختم ہوجائیں گے، بھنڈار اور ڈنگی جزائر پر شہر تعمیر کرنے کی مشرف نے بھی کوشش کی تھی وہ بھی ناکام ہوئے۔

مزید :

صفحہ اول -