احکامات نظر انداز کرنے پر دو این ایچ اے افسر معطل

احکامات نظر انداز کرنے پر دو این ایچ اے افسر معطل

  

ملتان(نمائندہ خصوصی)وفاقی وزارت مواصلات  نے نیشنل ہائی ویزاتھارٹی کے دواعلی افسران کو معطل کردیاہے.بتایاجاتاہے گریڈ20کے جنرل منیجرایڈمن چوہدری برکت علی کو تین سال اوراس سے زائد عرصہ سے ایک ہی پوسٹ پربیٹھے ہوئے افسران اورآفیشلزکے تبادلہ کرنے کے احکامات پر عمل درآمد نہ کرنے پرجبکہ گریڈ21کے ممبرانجینئرنگ کوآرڈینشن ارباب علی اکبرکوپبلک اکاؤٹنٹس کمیٹی اورڈیپارٹمنٹل آڈٹ کمیٹی کے گزشتہ دنوں منعقدہ اجلاس (بقیہ نمبر40صفحہ 7پر)

میں عدم شرکت پر معطل کیاہے.ذرائع کاکہنا ہے کہ جی ایم ایڈمن کوپبلک اکاؤنٹس کمیٹی کی طرف سے گزشتہ سال ہدائت کی گئی تھی کہ وہ ایک اسٹیشن پرتین سال اوراس سے زائدعرصہ سے تعینات آفیسرز اورآفیشلز کے تبادلوں کویقینی بنائیں تاہم انہوں نے اس پرمکمل طورپرعملدرآمدنہیں کروایا.اسی طرح گزشتہ سال ڈی جی فیڈرل آڈٹ نے بھی چئیرمین این ایچ اے کولکھاتھاکہ این ایچ اے میں ایک عرصہ سے آفیسرزاپنی من پسندپوسٹوں پربیٹھے ہیں انہیں فوری تبادلہ کیا جائے جس پروزارت مواصلات نے جی ایم ایڈمن کوعملدرآمدکی ہدائت کی تھی تاہم وہ اس پر عملدرآمد میں ناکام رہے.اسی طرح بتایا جاتاہے کہ ممبرانجینئرنگ کوآرڈنیشن ارباب علی اکبر کوپبلک آڈٹ کمیٹی اورڈیپارٹمنٹل پرموشن کمیٹی نے آڈٹ پیروں کے اعتراضات کی جوابدہی کے لئے طلب کیاتھاتاہم وہ پی اے سی اور ڈی پی سی کمیٹی کے اجلاسوں میں شریک نہ ہونے جس پر دونوں کمیٹیوں کی سفارش پر وفاقی وزارت مواصلات نے ممبر ای سی کوبھی معطل کردیاہے.این ایچ اے ذرائع کے این ایچ اے کے اعلی افسران کی معطلی پر ملک بھرمیں این ایچ اے کے افسران کی طرف سے ملاجلاردعمل سامنے آرہاہے کچھ افسران اسے چیئرمین این ایچ اے اور سیکرٹری مواصلات بورڈ کااحسن اقدام قرار دے رہے ہیں توکچھ اسے افسران کے ساتھ ناانصافی سے تعبیر کررہے ہیں.بتایاجاتاہے کہ آنے والے دنوں میں این ایچ اے میں افسران اورآفیشلز کاکڑااحتساب شروع ہونے والا ہے۔

معطل

مزید :

ملتان صفحہ آخر -