نرسزکو دوران ڈیوٹی ہراساں کرنا معمول‘ ڈاکٹرز کیخلاف ایکشن ضروری‘ ثریا شہناز 

نرسزکو دوران ڈیوٹی ہراساں کرنا معمول‘ ڈاکٹرز کیخلاف ایکشن ضروری‘ ثریا ...

  

ملتان (وقائع نگار) ڈاکٹرز کی طرف سے نرسز کو آئے روز دوران ڈیوٹی ہراساں کرنے،تشدد اور ہتک آمیز رویہ اختیار کرنے کے واقعات معمول بن گئے ہیں، محکمہ صحت اور دیگر قانونی ادارے سیاسی دباؤ و اثر رسوخ کی وجہ سے ڈاکٹرز کے خلاف محکمانہ کارروائی کرنے سے گریز کرتے ہیں جس کی وجہ سے نرسز میں شدید بے چینی و اضطراب پایا جاتا ہے،صوبائی نرسز ایسوسی ایشن پنجاب کی صدر و سابق پرنسپل کالج آف نرسنگ نشتر میڈیکل یونیورسٹی ملتان ثریا شہناز نے وزیرِ اعلیٰ پنجاب سردار (بقیہ نمبر29صفحہ 6پر)

عثمان بزدار کو دی گئی ایک درخواست  میں مطالبہ کیا ہے کہ ذمہ دار ڈاکٹرز کے خلاف قانونی کارروائی عمل میں لائی جائے،انہوں نے اپنی درخواست میں مؤقف اختیار کیا کہ چند ماہ قبل بھی تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال شور کورٹ ڈسٹرکٹ جھنگ میں دوران ڈیوٹی سٹاف نرس روبینہ ناز کو  سینئر میڈیکل آفیسر ڈاکٹر صفدر نے ہراساں کیا اور اس پر تشدد کیا مگر ہیلتھ ڈیپارٹمنٹ نے وقتی طور پر مزکورہ ڈاکٹر کو معطل کیا تاہم بعد ازاں سیاسی اثر رسوخ کی بناء پر دوبارہ بحال کر دیا اور اس کیس کی انکوائری تاحال نہ ہو سکی،اسی طرح کا ایک اور واقعہ تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال کبیر والا میں ہوا جہاں سٹاف نرس کو دوران ڈیوٹی ڈاکٹر نے مریضوں اور لواحقین کے سامنے گالیاں دیں اور تشدد کرنے کی کوشش کی اس واقعہ پر بھی ذمہ دار ڈاکٹر کے خلاف بھی کوئی قانونی یا محکمانہ کارروائی نہ  کی گئی۔صوبائی نرسز ایسو سی ایشن پنجاب کی صدر نے وزیرِاعلی پنجاب اور دیگر حکام بالا سے اپیل ہے کہ نرسز سے آئے روز بد تمیزی اور ہتک آمیز رویہ اختیار کرنے والے ڈاکٹروں کے خلاف فوری کارروائی عمل میں لائی جائے بصورت دیگر اس غیر یقینی صورت حال میں نرسز اپنی خدمات سر انجام دینے کے لئے بالکل تیار نہیں ہیں اور نرسز ان واقعات کے خلاف سڑکوں پر آنے کیلئے تیار ہیں،ثریا شہناز نے کہا ان واقعات میں ملوث ڈاکٹرز کے خلاف فوری کاروائی کرتے ہوئے آئندہ کیلئے قانونی لائحہ عمل بھی تشکیل دیا جائے تاکہ مزید اس طرح کے گھٹیا واقعات کو روکا جا سکے۔

ثریا شہناز

مزید :

ملتان صفحہ آخر -