یونہی بیٹھے رہو بس دردِ دل سے بے خبر ہو کر  | اسرارالحق مجاز|

یونہی بیٹھے رہو بس دردِ دل سے بے خبر ہو کر  | اسرارالحق مجاز|
یونہی بیٹھے رہو بس دردِ دل سے بے خبر ہو کر  | اسرارالحق مجاز|

  

یونہی بیٹھے رہو بس درد دل سے بے خبر ہو کر 

بنو کیوں چارہ گر تم کیا کروگے چارہ گر ہو کر 

دکھا دے ایک دن اے حسنِ رنگیں جلوہ گر ہو کر 

وہ نظارہ جو  اِن آنکھوں میں رہ جائے نظر ہو کر 

دلِ سوز  آشنا کے جلوے تھے جو منتشر ہو کر 

فضائے دہر میں چمکا کئے برق و شرر ہو کر 

وہی جلوے جو اک دن دامنِ دل سے گریزاں تھے 

نظر میں رہ گئے گل ہائے دامانِ نظر ہو کر 

فلک کی سمت کس حسرت سے تکتے ہیں معاذ اللہ 

یہ نالے نارسا ہو کر، یہ آہیں بے اثر ہو کر 

یہ کس کے حسن کے رنگین جلوے چھائے جاتے ہیں 

شفق کی سرخیاں بن کر تجلی کی سحر ہو کر 

شاعر: اسرار الحق مجاز

(شعری مجموعہ: آہنگ، سالِ اشاعت، 1952)

Yun   Hi    Baithay   Raho   Bass   Dard -e-Dil   Say   Be   Khabar   Ho   Kar

Bano   Kiun   Chaaragar   Tum ,  Kaya   Karo   Gay   Chaaragar   Ho  Kar

Dikha   Day   Aik  Din   Ay   Husn-e- Rangeen   Jalwagar   Ho   Kar

Wo   Jalwa   Jo   In   Aankhon   Men    Reh   Jaey   Nazar   Ho   Kar

Dil -e-Soz   Aashna   K   Jalway   Thay   Jo   Muntashir   Ho   Kar 

Fazaa -e- Dehr   Men   Chamka    Kiay   Barq-o- Sharar   Ho   Kar

Wahi   Jalway   Jo   Ik   Din   Daaman -e- Dil    Say   Gurezaan   Thay

Nazr   Men   Reh   Gaey   Gul   Haa-e- Damaan -e-Nazar   Ho  Kar

Falak   Ki   Samt   Kiss   Hastrat   Say  Taktay   Hen   Maaz  ALLAH

Yeh   Naalay   Narasaa   Ho   Kar  ,  Yeh   Aahen   Be   Asar   Ho   Kar

Yeh    Kiss   K   Husn   K   Rangeen    Jalway   Chhaaey   Jaatay   Hen

Shafaq   Ki   Surkhyaan   Ban   Kar ,  Tajalli -e-Sahar   Ho   Kar

Poet: Israrul  Haq  Majaz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -