حسن پھر فتنہ گر ہے کیا کہئے  | اسرارالحق مجاز|

حسن پھر فتنہ گر ہے کیا کہئے  | اسرارالحق مجاز|
حسن پھر فتنہ گر ہے کیا کہئے  | اسرارالحق مجاز|

  

حسن پھر فتنہ گر ہے کیا کہئے 

دل کی جانب نظر ہے کیا کہئے 

پھر وہی رہ گزر ہے کیا کہئے 

زندگی راہ پر ہے کیا کہئے 

حسن خود پردہ ور ہے کیا کہئے 

یہ ہماری نظر ہے کیا کہئے 

آہ تو بے اثر تھی برسوں سے 

نغمہ بھی بے اثر ہے کیا کہئے 

حسن ہے اب نہ حسن کے جلوے 

اب نظر ہی نظر ہے کیا کہئے 

آج بھی ہے مجازؔ خاک نشیں 

اور نظر عرش پر ہے کیا کہئے 

شاعر: اسرارالحق مجاز

(شعری مجموعہ: آہنگ، سالِ اشاعت، 1952)

Husn   Phir   Fitna    Gar   Hay   Kaya   Kahiay

Dil   Ki   Jaanib   Nazar   Hay   Kaya   Kahiay

Phir   Wahi   Rehguzar   Hay   Kaya   Kahiay

Zindagi   Raah   Par   Hay   Kaya   Kahiay

Husn   Khud   Parda   Dar   Hay   Kaya  Kahiay

Yeh   Hamaari   Nazar   Hay   Kaya   Kahiay

Aah   To   Be Asar   Thi   Barson   Say

Naghma   Bhi    Be Asar    Hay   Kaya   Kahiay

Husn    Hay    Ab   Na    Husn    K   Jalway

Ab    Nazar   Hi    Nazar    Hay   Hay    Kaya    Kahiay

Aaj   Bhi   Hay   MAJAZ   Khaak   Nasheen

Aor    Nazar    Arsh    Par    Hay   Kaya   Kahiay

Poet: Israrul    Haq    Majaz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -