ہنگامِ شب و روز میں اُلجھا ہوا کیوں ہوں  | اشفاق حسین|

ہنگامِ شب و روز میں اُلجھا ہوا کیوں ہوں  | اشفاق حسین|
ہنگامِ شب و روز میں اُلجھا ہوا کیوں ہوں  | اشفاق حسین|

  

ہنگامِ شب و روز میں اُلجھا ہوا کیوں ہوں 

دریا ہوں تو پھر راہ میں ٹھہرا ہوا کیوں ہوں 

کیوں میری جڑیں جا کے زمیں سے نہیں ملتیں 

گملے کی طرح صحن میں رکھا ہوا کیوں ہوں 

اس گھر کے مکینوں کا رویہ بھی تو دیکھوں 

تزئین در و  بام میں کھویا ہوا کیوں ہوں 

گرتی نہیں کیوں مجھ پہ کسی زخم کی شبنم 

میں قافلۂ درد سے بچھڑا ہوا کیوں ہوں 

آنکھوں پہ جو اترا , نہ ہوا دل پہ جو تحریر 

اس خواب کی تعبیر سے سہما ہوا کیوں ہوں 

دن بھر کے جھمیلوں سے بچا لایا تھا خود کو 

شام آتے ہی اشفاقؔ میں ٹوٹا ہوا کیوں ہوں 

شاعر: اشفاق حسین

(شعری مجموعہ: آشیاں گم کردہ، سالِ اشاعت، 2009)

Hangaam -e-Shab -o- Roz   Men   Uljha    Hua    Kiun   Hun

Darya   Hun   To   Phir   Raah   Men   Thehra   Hua   Kiun   Hun

Kiun   Meri   Jarren   Ja   K   Zameen   Say   Nahen   Milten

Gamlay   Ki   Tarah    Sehn   Men   Rakha   Hua   Kiun   Hun

Iss   Gahr   K    Makeenon   Ka    Rawayya    Bhi   To   Dekhun

Tazeen -e- Dar -o-Baam    Men   Khoya   Hua   Kiun   Hun

Girti    Nahen   Kiun   Mujh    Pe   Kisi   Zakhm   Ki   Shabnam

Main    Qaafla -e- Dard    Say   Bichhra   Hua   Kiun   Hun

Aankhon    Pe    Jo   Utra , Na    Hua    Dil    Pe   Jo   Tehreer

Iss   Khaab    Ki    Tabeer   Say   Sehma   Hua   Kiun   Hun

Din    Bhar    K    Jahmailon   Say    Bachaa   Laaya    Tha    Khud    Ko

Shaam   Aatay   Hi    ASHFAQ   Main   Toota    Hua   Kiun    Hun

Poet: Ashfaq Hussain

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -