ہونٹوں پہ خموشیاں سجا کر | اشفاق حسین|

ہونٹوں پہ خموشیاں سجا کر | اشفاق حسین|
ہونٹوں پہ خموشیاں سجا کر | اشفاق حسین|

  

ہونٹوں پہ خموشیاں سجا کر

محفل کو اُداس مَت کیا کر

میں غیر ہوں تیرے واسطے اب

اب مجھ سے تپاک سے ملا کر

بے گھر کیا کتنی خواہشوں کو

اپنے لیے ایک گھر بنا کر

کاٹی ہے یہ فصل میں نے کیسی

خوابوں کی زمیں پہ ہل چلا کر

مفہوم بدل گیا خوشی کا

اک شخص کا غم گلے لگا کر

دنیا کا یہی رہے گا عالم

دنیا کا بہت نہ غم کیا کر

اب خواہشِ سائباں نہیں ہے

لے جاؤ یہ آسماں اٹھا کر

ہے عمر کی پانچویں دہائی

کچھ کارِ جنوں کی ابتدا کر

کٹتی ہی نہیں ہے رات اشفاؔق

میں تھک گیا دل جلا جلا کر

شاعر: اشفاق حسین

(شعری مجموعہ: آشیاں گم کردہ، سالِ اشاعت، 2009)

Honton   Pe   Khmoshiyaan   Saja   Kar

Mefill   Ko   Udaas   Mat   Kaya   Kar

Main   Ghair   Hun   Teray   Waastay   Ab

Ab   Mujh   Say   Tapaak   Say   Mila   Kar

Be   Ghar   Kia   Kitni   Khaahishon   Ko

Apnay   Liay   Aik    Ghar   Bana   Kar

Kaati    Hay    Fasl    Main   Nay   Kaisi

Khaabon    Ki   Zameen    Pe    Hall    Chalaa   Kar

Mafhoom    Badal    Gaya    Khushi    Ka

Ik    Shakhs   Ka   Gham   Galay   Laga   Kar

Dunya    Ka   Yahi    Rahay    Ga   Aalam

Dunya    Ka    Bahut    Gham   Na   Kia   Kar

Ab   Khaahish  - e - Saaibaan    Nahen    Hay

Lay   Jaao   Yeh    Aasmaan   Utha   Kar

Hay    Umr    Ki    Paanchven   Dihaai

Kuch    Kar -e- Junun    Ki    Ibtida   Kar

Katati     Hi    Nahen    Hay    Raat    ASHFAQ

Main   Tahak   Gaya   Dil   Jala    Jala   Kar

Poet: Ashfaq Hussain

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -