یہیں کہیں کوئی آواز دے رہا تھا مجھے  | اشفاق حسین|

یہیں کہیں کوئی آواز دے رہا تھا مجھے  | اشفاق حسین|

  

یہیں کہیں کوئی آواز دے رہا تھا مجھے 

چلا تو سات سمندر کا سامنا تھا مجھے 

میں اپنی پیاس میں کھویا رہا خبر نہ ہوئی 

قدم قدم پہ وہ دریا پکارتا تھا مجھے 

زمانے بعد ان آنکھوں میں اک سوال سا تھا 

کہ ایک بار پلٹ کر تو دیکھنا تھا مجھے 

یہ پاؤں رک گئے کیوں بے نشان منزل پر 

یہاں سے اک نیا رستہ نکالنا تھا مجھے 

یہ زندگی جو ترے نام سے عبارت تھی 

اسے کچھ اور بنانا سنوارنا تھا مجھے 

رفیقِ گردشِ سیارگاں سے پوچھوں گا 

وہ کون تھا جو خلاؤں میں ڈھونڈتا تھا مجھے 

تمام ترکِ مراسم کے باوجود اشفاقؔ 

وہ زیرِ لب ہی سہی گنگنا رہا تھا مجھے 

(شعری مجموعہ: آشیاں گم کردہ، سالِ اشاعت، 2009)

Yahen    Kahen     Koi    Awaaz    Day    Raha    Tha   Mujhay

Chala   To    Saat    Samnadar    Ka   Saamna   Tha   Mujhay

Main    Apni    Payaas    Men   Khoya    Raha    Khabar   Na   Hui

Qadam   Qadam     Pe   Wo   Darya    Pukaarta    Tha   Mujhay

Zamaanay    Baad   Un    Aankhon    Men   Ik    Sawaal    Sa   Tha

Keh    Aik    Baar    Palat    Kar   To   Dekhna   Tha    Mujhay

Yeh    Paon    Ruk    Gaey   Kiun   Be   Nishaan   Manzil    Par

Yahaan   Say    Ik   Naya    Rasta    Nikaalna    Tha   Mujhay

Yeh    Zindagi    Jo   Tiray    Naam   Say   Ibarat   Thi

Usay    Kuch    Aor   Banaana   Sanwaarna   Tha   Mujhay

Rafeeq -e- Gardish-e- Sayyaargaan    Say   Poocchon

Wo    Kon   Tha   Jo   Khalaaon   Men    Dhoondta    Tha   Mujhay

Taam    Tark -e- Maraasam    K   Bawajood    ASHFAQ

Wo    Zer -e- Lab    Hi    Sahi    Gunganaa   Raha   Tha   Mujhay

Poet: Ashfaq Ahmad

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -