جزیرے کی طرح میری نشانی کس لیے ہے | اشفاق حسین|

جزیرے کی طرح میری نشانی کس لیے ہے | اشفاق حسین|

  

جزیرے کی طرح میری نشانی کس لیے ہے

مرے چاروں طرف پانی ہی پانی کس لیے ہے

میں اکثر سوچتا ہوں دل کی گہرائی میں جا کر

زمیں پر ایک چادر آسمانی کس لیے ہے

بظاہر پُر سکوں اور دل کی ہر اک رگ سلامت

تو زیر ِ سطح دریا میں روانی کس لیے ہے

میں ٹوٹا ہوں تو اپنی کرچیاں بھی جوڑ لوں گا

بکھرنے پر مرے یہ شادمانی کس لیے ہے

یہ دل‘ بے حوصلہ دل‘ میرے کہنے میں نہیں جب

تو اپنے دل کی میں نے بات مانی کس لیے ہے

کریں لہجے بدل کر گفتگو اک دوسرے سے

ہمارے درمیاں یہ بے زبانی کس لیے ہے

سبھی کردار اپنا کام پورا کرچکے ہیں

پھر آخر نامکمل یہ کہانی کس لیے ہے

شاعر: اشفاق حسین

(شعری مجموعہ: آشیاں گم کردہ، سالِ اشاعت، 2009)

Jazeeray   Ki    Tarah   Meri    Nishaani    Kiss   Liay    Hay

Miray   Chaaron   Taraf    Paani   Hi    Paani    Kiun   Hay

Main    Aksar   Sochta   Hun    Dil    Ki   Grehraai   Men   Ja   Kar

Zameen  Par   Aik   Chaadar   Aasmaani    Kiss   Liay   Hay

Bazaahir    Pursakoon   Aor    Dil   Ki    Har   Ik   Rag   Salaamat

To   Zer -e- Sath -e- Darya    Ik    Rawaani   Kiss   Liay   Hay

Main   Toota    Hun    To   Apni    Kirchiyaan   Bhi   Jorr   Lun   Ga

Bikharnay   Pe   Miray   Yeh   Shaadmaani   Kiss   Liay   Hay

Yeh   Dil  , Yeh    Be    Hosla   Dil   Meray    Kehnay   Men    Nahen   Jab

To   Apnay   Dil   Ki    Main  Nay Baat   Maani   Kiss   Liay   Hay

Karen    Lehjay   Badal   Kar   Guftagu   Ik   Doosray   Say

Hamaaray   Darmiaan   Yeh   Be   Zubaani   Kiss   Liay   Hay

Sabhi   Kirdaar   Apna   Kaam   Poora   Kar   Chukay   Hen 

To   Aakhir   Na   Mukammal  Yeh  Kahaani  Kiss   Liay   Hay

Poet: Ashfaq   Hussian

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -