آنکھوں کو روز ایک نیا خواب چاہیے | اشفاق حسین|

آنکھوں کو روز ایک نیا خواب چاہیے | اشفاق حسین|
آنکھوں کو روز ایک نیا خواب چاہیے | اشفاق حسین|

  

اس زندگی میں کچھ تو تب و تاب چاہیے 

آنکھوں کو روز ایک نیا خواب چاہیے 

اس شہر بے مثال کی گلیوں کے ساتھ ساتھ 

سر پر ردائے انجم و مہتاب چاہیے 

خاموشیوں کو اذن تکلم جہاں ملے 

وہ بزم اور وہ حلقۂ احباب چاہیے 

لمحہ بہ لمحہ لگتے رہیں زخم بے شمار 

حلقہ بہ حلقہ اک نیا گرداب چاہیے 

دل میں کسی کے غم کی کمانیں تنی رہیں 

چہرہ مگر بہ حالتِ شاداب چاہیے 

اے یادِ یار ! ابر کی صورت کبھی برس 

دریائے دل کو درد کا سیلاب چاہیے 

گہرے سمندروں کے سفر سے پتا چلا 

جینا بہ شکلِ موجِ تہہِ آب چاہیے 

اس شہرِ یارِ حسن سے کم کم کرو خطاب 

اشفاقؔ عشق میں حدِ  آداب چاہیے 

Iss    Zindagi    Men   Kuch   To   Tab -o- Taab    Chaahiay

Aankhon    Ko    Roz    Aik    Naya    Khaab    Chaahiay

 

Iss   Shehr -e-Be Misaal     Ki     Galion    K    Saath   Saath

Sar   Par   Anjum -o-  Mahtaab   Chaahiay

 

Kahamoshiun   Ko   Izn -e- Takallum    Jahan   Milay

Wo    Bazm    Aor    Wo   Halq -e- Ahbaab   Chaahiay

 

Lamha    Ba    Lamha    Lahgtay    Rahaen    Zakhm     Be shumaar

Halqa    Ba    Halqa    Ik    Naya    Gardaab    Chaahiay

 

Dil   Men    Kisi   K   Gham   Ki    Kamaanen   Tani   Rahen

Chehra    Magar   Ba  Haalat -e- Shadaab    Chaahiay

 

Ay  Yaad -e- Yaar ! Abr    Ki    Soorat    Kabhi   Baras

Darya -e- Dil    Ko    Dard    Ka     Sailaab   Chaahiay

 

Gehray     Samandron    K    Safar   Say   Pata  Chala

Jeena    Ba    Shakl -e- Maoj -e-  Tah -e- Aab    Chaahiay

 

Uss     Shehr- e- Yaar-e- Husn    Say   Kam   Kam   Karo   Khitaab

ASHFAQ    Eshq    Men    Had -e- Adaab    Chaahiay

 

Poet: Ashfaq Hussain

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -