میرے دل میں جنگل ہے  | اصغر ندیم سید|

میرے دل میں جنگل ہے  | اصغر ندیم سید|

  

میرے دل میں جنگل ہے 

میرے دل میں جنگل ہے 

اور اس میں بھیڑیا رہتا ہے 

جو رات کو میری آنکھوں میں آ جاتا ہے 

اور سارے منظر کھا جاتا ہے 

صبح کو سورج اپنے پیالے سے شبنم ٹپکاتا ہے 

اور دن کا بچہ 

میری روح کے جھولے میں رکھ جاتا ہے 

میرے دل میں جنگل ہے 

اور اس میں فاختہ رہتی ہے 

جو اپنے پروں سے میرے لئے 

اک پرچم بنتی رہتی ہے 

اور خوشبو سے اک نغمہ لکھتی رہتی ہے 

پھر تھک کر میرے بالوں میں سو جاتی ہے 

میرے دل میں جنگل ہے 

اور اس میں جوگی رہتا ہے 

جو میرے خون سے اپنی شراب بناتا ہے 

اور اپنے ستار میں چھپی ہوئی لڑکی کو 

پاس بلاتا ہے 

پھر جنگل بوسہ بن جاتا ہے 

میرے دل میں جنگل ہے 

اور اس میں بھولا بھٹکا زخمی شہزادہ ہے 

جس کا لشکر 

خون کی دھار پہ اس کے پیچھے آتا ہے 

وہ اپنے وطن کے نقشے کو زخموں پہ باندھ کے 

آخری خطبہ دیتا ہے 

پھر مر جاتا ہے 

میرے دل میں جنگل ہے 

اور اس میں گہری خاموشی ہے 

شاعر:اصغر ندیم سید

(شعری مجموعہ: ادھوری کلیات، سالِ اشاعت، 2014)

Meray    Dil     Men    Jangal   Hay

Aor    Iss    Men    Bhairrya    Rehta   Hay

Jo    Raat   Ko   Meri   Aankhon   Men   Aa    Jaata   Hay

Aor    Saaray    Manzar   Kha   Jaata   Hay

Subh   Ko   Sooraj   Apnay   Payaalay   Say   Shabnam   Tapkaata   Hay 

Aor   Din  Ka   Bacha

Meri   Rooh   K   Jhoolay   Men   Rakh   Jaata   Hay

Meray    Dil     Men    Jangal   Hay

Aor    Iss   Men    Faakhta    Rehti   Hay

Jo    Apnay   Paron    Say   Meray   Liay

Ik    Parcham   Bunti   Rehti   Hay

Aor   Khushbu   Say   Ik   Naghma   Likhti   Rehti   Hay

Phir   Thak   Kar   Meray   Baalon   Men   So   Jaati   Hay

Meray   Dil    Men   Jangal   Hay

Aor   Iss   Men   Jogi   Rehta   Hay

Jo   Meray   Khoon   Say   Apni   Sharaab   Banaata   Hay

Aor   Apnay   Sitaar   Men  Chhupi   Hui   Larrki   Ko

Paas   Bulaata   Hay

Phir   Jangal   Bosa   Ban   Jaata   Hay

Meray   Dil    Men   Jangal   Hay

Aor   Iss   Men   Bhoola   Bhattka   Zakhmi   Shzaada   Hay

Jiss   Ka   Lashkar

Khoon    Ki   Dhaar    Pe    Uss    K   Peechhay    Aata   Hay

Aor    Apnay   Watan   K   Naqshay   Ko   Zakhmon   Pe   Baandh   Kar

Aakhri   Khutba   Deta   Hay

Phir   Mar   Jaata   Hay

Meray   Dil    Men   Jangal   Hay

Aor   Iss   Men   Gehri   Khamoshi   Hay

Poet: Asghar    Nadeem    Sayed

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -