میری پاک دھرتی

میری پاک دھرتی
میری پاک دھرتی

  

میری پاک دھرتی

تو ہے مٹی میری، تو ہے جنت میری

تو ہے عزت میری ، تو ہے عظمت میری

ذرہ ذرہ تیرا پھول ہے ، نور ہے

خاک تیری مجھے مثلِ کافور ہے

تیرے دریا، سمندر، مہکتے چمن

تجھ سے روشن ہے میرا من اور میرا دھن

تجھ سے وعدہ رہا پاک میرے وطن

جب ضرورت پڑی خونِ دل دیں گے ہم

ہم ہیں تیرے جواں، تیرے ہم پاسباں

دشمن کےلیے ہیبت کا نشاں

تیری عزت کی خاطر ہٰیں جنگیں لڑیں

ساری دنیا ہے سےعظمت ہے تیری بڑی

تیرے فوجی ہیں ہم ، تیرے بازو ہیں ہم

ہم ہیں تیرے شہید ، تیرے غازی ہیں ہم

اس مقدس دھرتی زمیں کے قرض دار ہیں

تیرے جھنڈے کی عزت کےسالار ہیں

جب بھی دشمن نے آنکھیں تیری اور کیں

اس کی آنکھیں ملا دیں گے مٹی میں ہم

جب بھی للکاری دشمن نے غیرت تیری

جان حرمت پہ تری لٹا دیں گے

ہم ہیں بیٹے ترے سرحدوں کے امیں

تیرے میدانوں ، صحراؤں کے ہم مکیں

اک اشارہ ترا ،ایک جنبش تری

ایسا پھندہ گلے اس کے ڈالیں گے ہم

تیرے دشمن کی سانسیں نکالیں گے ہم

جان ہماری اگر کام آئے ترے

لاکھ جانیں بھی تجھ پہ واریں گے ہم

تیرا خوشیوں سے آنگن سنواریں گے ہم

پیار دل میں مرے تیری مٹی سے ہے

غازیوں کی ، شہیدوں کی دھرتی تو ہے

ہے محافظ تو دنیا میں  اسلام کا

دھاک سارے جہاں میں تیرے نام کی

تیری خاطر ہے حاضر ہماری یہ جاں

سب سپاہی ترے پیر ہو ں یا جواں

راہِ راست ہو یا ضربِ حزب

تیرے دشمن پہ ہم ٹوٹے بن کے  غضب

دودھ جن ماؤں کا ہے ہم نے پیا

ہیں وطن کی محبت سے سرشار  وہ

اور قسم ہے ہمیں ماؤں کے دودھ کی

تیرے دشمن کو ماریں گے ہم اس طرح

کہ نشاں اور عبرت کا دیں گے بنا

کہ نشاں اور عبرت کا دیں گے بنا

شاعر: حبیب الرحمان، اسلام آباد

MERI   PAK   DHARTI

Tu hy Matti meri, tu hy Jannat meri

Tu hay izzat meri, tu hay azmat meri

Zarra, zarra tera, Phool hy, noor hy

Khaak teri mujhay mislay kafoor hy

Teray daria, samundar, mehkty chaman

Tuj sy roshan hy ma'n mera aur mera dhan

Tuj sy waada raha Pak meray  watan

Jab zaroorat pari, khoon e dil dain gay hum

Ham hain tery jawan, tery hum pasban

Dushmanoo k liay, hybat ka nishaan

Teri izzat ki khatar hain janghein lari

Sari dunia sy azmat hy teri bari

Tery foji hain hum, tery bazoo hain hum

Ham hain tery shaheed ,tery ghazi hain hum

Iss muqaddas zameen k qaraz dar hum

Teray jhandy ki izzat k salaar hum

Jab b dushmin ny ankhein teri orh ki

Os ki ankhein mila dain gay matti mein hum

Jab b lalkari dushman ny ghairat teri

Jan hurmat pe teri luta dain gay hum

Hum hain baity tery, sarhadoon k ammen

Teray maidanoo, sehraoon k hum makeen

Ik ishara tera, aik junbash teri

Aisa phanda galy os k daleen gay hum

Tery dushman ki sansain nikalain gay hum

Jan hamari agar kam aey teray

Lakh jaanen b tuj pe, wareen gay  hum

Tera khushion sy angan sanwareen gay hum

Piar dil mein meray, teri matti sy hy

Ghazion ki Shaheedo  ki dharti tu hy

Hay muhafiz tu dunia mein Islam ki

Dhaak sary jahan mein tery naam ki

Teri khatar hy hazir hamari ye Jan

Sab sepahi teray, peer hon ya jawan

Ra haay rast ho, ya k Zarb e Hazb

Tery dusman pe ham  totay ban k gazab

Dodh jin maoon ka hy ham ny piaya

Hain watan ki mohabat sy sarshar wo

Aur qasam hy hamein maoon k dodh ki

Teray dushman ko maren gay ham iss tarha

K Nishaan os ko ibrat ka Dain gay bana

K nishaan os ko ibrat ka dain gay bana

Poet:Habibur Rehman

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -