آنکھوں سے عیاں زخم کی گہرائی تو اب ہے  | اعتبار ساجد|

آنکھوں سے عیاں زخم کی گہرائی تو اب ہے  | اعتبار ساجد|

  

آنکھوں سے عیاں زخم کی گہرائی تو اب ہے 

اب آ بھی چکو وقت مسیحائی تو اب ہے 

پہلے غم فرقت کے یہ تیور تو نہیں تھے 

رگ رگ میں اترتی ہوئی تنہائی تو اب ہے 

طاری ہے تمناؤں پہ سکرات کا عالم 

ہر سانس رفاقت کی تمنائی تو اب ہے 

کل تک مری وحشت سے فقط تم ہی تھے آگاہ 

ہر گام پہ اندیشۂ رسوائی تو اب ہے 

کیا جانے مہکتی ہوئی صبحوں میں کوئی دل 

شاموں میں کسی درد کی رعنائی تو اب ہے 

دل سوز یہ تارے ہیں تو جاں سوز یہ مہتاب 

در اصل شب انجمن آرائی تو اب ہے 

صف بستہ ہیں ہر موڑ پہ کچھ سنگ بکف لوگ 

اے زخم ہنر لطف پذیرائی تو اب ہے 

شاعر: اعتبار ساجد

(شعری مجموعہ: پذیرائی، سالِ اشاعت، 1987)

Aankhon   Say   Ayaan   Zakhm    Ki   Gehraai   To   Ab   Hay

Ab   Aa    Bhi   Chuko ,  Waqt-e- Masehaai    To   Ab   Hay

Pehlay    Gham -e- Furqat   K   Yeh   Taiwar   To   Nahen   Thay

Rag   Rag   Men   Utarti   Hui   Tanhaai   To   Ab   Hay

Taari   Hay    Tamanaao   Pe   Saukraat    Ka   Aalam

Har   Saans    Rafaaqat   Ka  Tamannaai   To   Ab   Hay

Kall   Tak   Miri   Wehshat   Say   Faqat   Tum   Hi   Thay   Agaah

Har  Gaam   Pe   Andhesha -e- Ruswaai   To   Ab   Hay

Kay   Jaanay   Mahakti   Hui   Subhon   Men   Koi   Dil

Shaamon   Men   Kisi   Dard   Ki   Raanaai   To   Ab   Hay

Dil   Soz   Yeh   Sannaatay   Hen   Jaan   Soz   Yeh    Mahtaab

Dar   Asl   Shab -e- Anjuman   Aaraai   To   Ab   Hay

Saf   Basta   Hen   Har   Morr   Pe   Kuch   Sang   Bakaff  Log

Ay   Zakhm -e-Hunar  ,  Lutf -e- Pazeeraaai   To   Ab   Hay

Poet: Aitbar   Sajid  

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -