دھڑکن دھڑکن یادوں کی بارات اکیلا کمرہ  | اعتبار ساجد|

دھڑکن دھڑکن یادوں کی بارات اکیلا کمرہ  | اعتبار ساجد|

  

دھڑکن دھڑکن یادوں کی بارات اکیلا کمرہ 

میں اور میرے زخمی احساسات اکیلا کمرہ 

گئے دنوں کی تصویروں کے بجھتے ہوئے نقوش 

تازہ ترکِ تعلق کے صدمات اکیلا کمرہ 

دوش ہوا پر اڑنے والے خزاں کے آخری پتے 

اپنی اکیلی جان، غمِ حالات اکیلا کمرہ 

آخری شب کے چاند سے کرنا بالکنی میں باتیں 

اس کے شہر میں ہوٹل کی یہ رات اکیلا کمرہ 

میری سسکتی آوازوں سے گونجتی ہیں دیواریں 

سنتا ہے دن رات مرے نغمات اکیلا کمرہ 

سب سامان بہم ہیں ساجدؔ لکھنے لکھانے کے 

خامۂ ہجر ، دسمبر،  دل کی دوات،  اکیلا کمرہ 

شاعر: اعتبارساجد

(شعری مجموعہ: پذیرائی، سالِ اشاعت، 1987)

Dharrkan   Dharrkan   Yadon   Ki   Baraat   ,   Akaila   Kamra

Main    Aor   Meray   Zakhmi    Ehsassat  ,  Akaila   Kamra

Gaey    Dino   Ki   Tasveeron   K   Bujhtay   Huay   Naqoosh

Taaza   Tark -e- Talluq   K   Sadmaat  ,   Akaila   Kamra

Dosh   Hawa   Par   Urrnay   Waalay   Khizaan   K   Aakhri   Pattay

Apni    Akaili   Jaan  ,   Gham   K   Halaat   ,   Akaila    Kamra

Aakhir    Shab   K   Chaand   Say   Karna   Baalkani   Men   Baaten

Uss    K   Shehr   Men   Hotal   Ki    Yeh    Raat    Akaila   Kamra

Meray   Dar-o-dewaar    Banen    Gay   Kab   Tak   Meray   Saamey

Sunta    Hay   Din   Raat   Miray   Naghmaat     Akaila    Kamra

Sab    Samaan    Baham    Hen   Ab   To   Likhnay   Likhaanay   Ka

Khaam -e- Hijr  ,   Decembar  ,   Dil    Ki   dawaat    Akaila   Kamra

Poet: Aitbar   Sajid

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -