صدارتی محل میں افغان کابینہ کے پہلے اجلاس کی اندرونی کہانی، برطانوی نشریاتی ادارے نےحیران کن دعویٰ کردیا 

 صدارتی محل میں افغان کابینہ کے پہلے اجلاس کی اندرونی کہانی، برطانوی ...
 صدارتی محل میں افغان کابینہ کے پہلے اجلاس کی اندرونی کہانی، برطانوی نشریاتی ادارے نےحیران کن دعویٰ کردیا 
سورس: File Photo

  

کابل(ڈیلی پاکستان آن لائن) افغانستان میں طالبان کی عبوری حکومت قائم ہوگئی ہے جس پر جہاں دیگر اقوام اور خواتین کی نمائندگی نہ ہونے کے باعث غیر ملکی دباؤ میں اضافہ ہواہےتو وہیں اندرون خانہ قیادت میں بھی اختلافات کی خبریں زیر گردش ہیں،طالبان کی جانب سے صدارتی محل میں کابینہ کے دو ارکان کے درمیان تلخ کلامی کے نتیجے میں ہونےوالی مبینہ فائرنگ سے ملا عبدالغنی برادر کی ہلاکت کی خبروں کی تردید کے بعد بی بی سی نے اس معاملے پر ایک طالبان عہدیدار سے بات کرتے ہوئے اجلاس کی اندرونی کہانی بیان کردی ہے۔

برطانوی نشریاتی ادارے "بی بی سی" کے مطابق طالبان عہدیدار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ نائب وزیراعظم ملا عبدالغنی برادر نے نئی حکومت کے ڈھانچے میں خواتین اور دیگر قومیتوں کی عدم شمولیت پر سوال اٹھایا جس پر کابینہ کے ایک اور رکن خلیل الرحمان حقانی سے بحث شروع ہوگئی۔صدارتی محل میں ہونے والی اس بحث و تکرار پر دونوں رہنماؤں کے حامی ارکان ایک دوسرے سے الجھ پڑے اور بات تلخ کلامی تک جا پہنچی۔ ملا عبدالغنی کے حامیوں کا کہنا تھا کہ امریکہ سے مذاکرات ہم نے کئے تھے اور عالمی برادری سے ایک متنوع حکومت کی تشکیل کا وعدہ بھی کیا تھا جس کی وجہ سے ہمیں افغانستان میں اتنی آسانی سے کامیابیاں نصیب ہوئی تھیں۔

دوسری جانب حقانی نیٹ ورک سے تعلق رکھنے والے وزیر برائے پناہ گزین خلیل الرحمان حقانی اور ان کے حامی ارکان کا موقف تھا کی غیر ملکی فوجی ان کی کارروائیوں کی وجہ سے پیچھے ہٹے اور امریکہ بھی اسی وجہ سے مذاکرات پر راضی ہوا تھا۔اس تلخ کلامی کے بعد سے نائب وزیراعظم ملا عبدالغنی برادر قندھار چلے گئے تھے جہاں وہ ممکنہ طور پر امیر طالبان کے سامنے یہ سارا معاملہ رکھیں گے۔

اس سارے میں معاملے میں سنسنی اس وقت پھیلی جب افغانستان میں واٹس ایپ گروپس پر صدارتی محل میں کابینہ ارکان کے درمیان تلخ کلامی کے نتیجے میں ہونے والی فائرنگ میں ملا عبدالغنی برادر کی ہلاکت کی خبریں گردش کر رہی تھیں جس پر طالبان کو تردیدی بیان جاری کرنا پڑا تاہم ملا عبدالغنی تاحال منظر عام پر نہیں آئے۔ادھر امیر طالبان ملا ہیبت اللہ بھی طالبان کے افغانستان کا مکمل کنٹرول حاصل کرنے اور حکومت کی تشکیل کے بعد بھی اب تک منظر عام پر نہیں آئے ہیں، ان کے بارے میں بھی کہا جا رہا ہے کہ وہ گزشتہ برس کورونا کے مرض میں مبتلا ہوکر انتقال کرگئے ہیں اور طالبان اپنے بانی ملامحمدعمر کی طرح موجودہ امیر کی بھی دنیا سے چلے جانے کی خبر چھپا رہے ہیں۔

مزید :

بین الاقوامی -