مقبوضہ کشمیر ،بیساکھی کا تہوار روایتی جوش و خروش کے ساتھ منایا گیا

مقبوضہ کشمیر ،بیساکھی کا تہوار روایتی جوش و خروش کے ساتھ منایا گیا

  



سرینگر(کے پی آئی ) وادی بھر میں بیساکھی روایتی جوش وخروش کے ساتھ منایاگیا اور اس موقعہ پر گورودواروں میں خصوصی تقاریب کے بیچ سرینگر میں واقع مغل باغات کورسمی طور سیلانیوں کیلئے کھول دیا گیا اور وہاں دن بھر سکھ برادری سے وابستہ لوگوں کا تانتا بندھا رہا۔ اطلاعات کے مطابق بیساکھی کے سلسلے میں ہر سال کی طرح اس سال بھی سکھ برادری سے تعلق رکھنے والے لوگوں میں خاصا جوش و جذبہ نظر آیا اور اس حوالے سے گوردواروں اور سکھوں کے دیگر مذہنی مقامات پرلوگوں کی بھاری بھیڑ نظر آئی جس کے دوران سکھ برادری کے ہزاروں مرد وزن اور بچوں نے شبد کیرتن کی خصوصی مجالس میں شرکت کی۔وادی کشمیر میں بیساکھی کا تہوار موسم بہار اور پنجاب میں نئے سال کی آمد کے طور پر منایا جاتا ہے جبکہ دیگر ریاستوں میں اس دن کو فصلوں کی کٹائی کے موسم کی شروعات مانا جاتا ہے۔بیساکھی کے موقعہ پر وادی کی سب سے بڑی تقریب گوردوارہ چھٹی پادشاہی کاٹھی دروازہ رعناواری میں منعقد ہوئی جہاں سکھ برادری سے تعلق رکھنے والے لوگوں کی بڑی تعداد ماتھا ٹیکنے کے لئے آئی جن میں خواتین اور بچے بھی شامل تھے۔اس دوران گورو دواروے میں مفت لنگر اور مشروبات کا انتظام بھی کیا گیا تھا۔گوروروارے کے گردونواح میں حفاظت کے معقول انتظامات کئے گئے تھے۔

اور اس مقصد کے لئے پولیس کے اضافی دستے گشت کرتے نظر آئے جبکہ ٹریفک پولیس کی ایک ٹیم بھی خصوصی طور تعینات کی گئی تھی۔ اسی طرح کی ایک اور بڑی تقریب گورودوارہ چھٹی پادشاہی باغات برزلہ میں بھی منعقد کی گئی جہاں صبح سے ہی سکھ برادری کے لوگوں کا تانتا بندھا رہا ، شبد کیرتن کا سلسلہ دن بھر جاری رہا، دیوان منعقد کئے گئے اور ہزاروں لوگوں نے حاضری دی۔کے ایم این سٹی رپورٹر کے مطابق گورودوارہ امیراکدل سرینگر میں بھی بیساکھی کے سلسلے میں خاص تقریب کا اہتمام کیا گیا جس میں لوگوں کی خاصی تعداد نے شرکت کی۔امیراکدل میں بھی رضاکاروں کی طرف سے راہگیروں میں مشروبات تقسیم کی جارہی تھیں جبکہ گورودوارہ میں دن بھر شبد کیرتن کی محفلیں آراستہ ہوئیں۔اس دوران سرینگر میں واقع مغل باغات کو ہر سال کی طرح آج ہی رسمی طور پر سیاحوں اور عام لوگوں کے لئے کھول دیا گیا جن میں نشاط،شالیمار،چشمہ شاہی،ہارون اورپری محل شامل ہیں۔ان جگہوں کے ساتھ ساتھ آج باٹنیکل گارڈن ،گل لالہ باغ ،نہرو پارک اور دیگر مقامات پر بھی مقامی اور غیر مقامی سیلانیوں کی بھاری بھیڑ نظر آئی جن میں زیادہ تر سکھ برادری سے وابستہ لوگ شامل تھے۔ اس دوران سکھ نوجوانوں نے کئی مغل باغات میں رقص و موسیقی کی محفلوں کا انعقاد کرکے اپنی خوشی کا اظہار کیا۔ادھر وادی کے مختلف علاقوں میں تعینات سیکورٹی فورسز اہلکاروں نے بھی بیساکھی کا تہوارجو ش و خروش کے ساتھ منایا اور اس سلسلے میں فورسز کیمپوں میں بھی خصوصی تقاریب منعقد کی گئیں۔ بارہمولہ سے کے ایم این نمائندے نے اطلاع دی ہے کہ قصبہ میں بیساکھی کا تہوار انتہائی روایتی جوش وجذبہ کے ساتھ منایا گیا اور اس موقعہ پر گورودوارہ چھٹی پادشاہی توحید گنج اور گورودروارہ محلہ جدیدمیں کل رات سے ہی خصوصی تقاریب کا سلسلہ جاری رہا۔منگل کی صبح قصبہ کے مختلف علاقوں میں مقیم سکھ برادری سے تعلق رکھنے والے لوگوں کی ایک بڑی تعداد نے گوردواروں میں حاضری دیکر ماتھا ٹیکا۔اس موقعہ پر رن برنگی کپڑوں میں ملبوس بچوں میں بھی خاصا جوش و خرش پایا جارہا تھا۔جنوبی قصبہ ترال میں بھی سکھ برادری نے بیساکھی کا تہوار روایتی انداز کے ساتھ منایا اور اس سلسلے میں خصوصی تقاریب کا انعقاد کیا گیا۔دریں اثنابیساکھی کے سلسلے میں سنگھ پورہ بارہمولہ،بڈگام،کپوارہ، ہندوارہ ، چوگل،اونتی پورہ ، چھٹی سنگھ پورہ ، مٹن اورشوپیان سمیت تمام ایسی جگہوں پر خاص تقاریب کا انعقاد کیا گیا جہاں سکھ برادری سے وابستہ لوگ مقیم ہیں۔ان تقاریب کا سلسلہ دن بھر جاری رہا جن میں مجموعی طور ہزاروں لوگوں نے شرکت کی۔

مزید : عالمی منظر


loading...