غیر ریاستی دخل اندازی اور کشمیری تشخص کی پامالی

غیر ریاستی دخل اندازی اور کشمیری تشخص کی پامالی
 غیر ریاستی دخل اندازی اور کشمیری تشخص کی پامالی

  



سیاسی حادثات جہاں کچھ لے کرجاتے ہیں، وہاں کچھ نہ کچھ دے کر بھی جاتے ہیں۔ آزاد کشمیر کے ان سیاسی حادثات نے کئی لوگوں کو یہ سبق اچھی طرح یاد کروا دیا ہے کہ غرور، تکبر، بڑے بڑے بول اور ناشکری کی سزا ناقابل برداشت حد تک قبول کرنا پڑتی ہے،بقول شاعر: اُن کی ضد ہے کہ ظلم و ستم بھی سہو اور تاکید کرتے ہیں چپ بھی رہو جس مسلم کانفرنس کو ایوب خان، ضیا الحق اور ذوالفقار علی بھٹو کا فوجی اور سول مارشل لا ختم نہ کر سکا، جو جماعت شیخ محمد عبداللہ ، غازی ملت سردار محمد ابرہیم خان اور کے ایچ خورشید کی جدائی کے باوجود چل سکتی ہے کہ جس کا ماضی قابل فخر اور مستقبل قابل رشک ہو، اُس جماعت نے ان دوستوں کا کیا بگاڑا ہے کہ روزانہ قوم کو اس کے خاتمے کی نوید سناتے ہیں۔ان سب کے پاس مسلم کانفرنس کا کیا متبادل ہے؟ کیا یہی متبادل ہے جو دوستوں نے مل کر اپنی عزت نفس اور ریاستی تشخص کے تحفظ کے لئے تلاش کیا ہے۔ کیا ایکٹ 74 کی اصلاح کا یہ راستہ ہے؟ منگلا ڈیم کی رائلٹی کے اسی چشمے سے برآمد ہو گی کیا؟ مسلم کانفرنس کے صدر اور سابق صدر کی حیثیت سے پاکستان کے بڑے سے بڑے فورم کی قیادت کرنے والے سردار سکندر حیات خان کو ہفتوں ، مہینوں اور برسوں اپنی ہی پارٹی کی قیادت کے دیدار کا موقع نہیں ملتا، جس پر وہ قومی اخبارات میں اپنے درد دل کا باربار اظہار کرتے ہیں جو ہم سب کی اذیت کا باعث بھی ہے۔ سردار سکندر حیات خان بلا شبہ مجاہد اول سردار محمد عبدالقیوم خان کے بعد ریاست کی بڑی شخصیات میں سے ہیں۔ انہیں غیر ریاستی جماعتوں کے ساتھ کام کرنے کا تجربہ پہلے بھی ہو چکا ہے ۔مسلم کانفرنس کی ایک اسمبلی نے انہیں دو بار آزاد کشمیر کا صدر منتخب کیا ۔راقم نے خود اُن کے چیف پولنگ ایجنٹ کے فرائض انجام دیئے،دوسری بار منتخب ہونے کے بعد انہوں نے ایک جلسہ عام میں کہا کہ ’’اوپر اللہ اور نیچے مجاہد اوّل‘‘۔ اُن کا یہ تاریخی جملہ آج بھی قومی اور ریاستی تمام اخبارات میں موجود ہے ۔ پاکستان میں پیپلز پارٹی کی حکومت کے ساتھ اُن کے تعلقات انتہائی مستحکم تھے ۔ اس موقع پر اُن کی طرف سے جاری کی گئی چارج شیٹ کا ذکر مقصود نہیں، تا ہم وہی چارج شیٹ آزاد کشمیر میں پیپلز پارٹی کی کامیابی کی ایک بڑی بنیاد بنی۔ آزاد کشمیر میں پی پی پی کی حکومت نے اپنے قیام کے بعد پہلا کام یہ کیا کہ سردار سکندر حیات خان کو آزاد کشمیر کی صدارت سے جس طرح برطرف کیا، اُس کا اظہار خود سردار سکندر حیات خان کی زبان سے اخبار ات کے صفحات پر آج بھی محفوظ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ’’ایک چپڑاسی کو بھی برطرف کرنے کے لئے چارج شیٹ کی ضرورت پڑتی ہے، لیکن مجھے بطور صدر جس طرح پیپلزپارٹی نے صدارت سے الگ کیا، اُس سے زیادہ کمینے پن، گھٹیاانداز اور بھونڈے پن کا مظاہرہ کبھی دیکھنے میں نہیں آیا‘‘۔ خیال واثق تھا کہ اُس کے بعد سردار سکند ر حیات خان اُس تجربے کو کبھی نہیں دوہرائیں گے، لیکن مقام افسوس ہے کہ اتنی بڑی قد کاٹھ کی شخصیت نے ایک بار پھر مسلم لیگ(ن) کے ساتھ اُسی تجربے کو دوہرایا، جس کا نتیجہ ماضی کے تجربے سے کچھ زیادہ مختلف نہیں ۔ ہر خاص و عام کے علم میں ہے کہ مسلم لیگ(ن) آزاد کشمیر کے قائدین اور کارکنان اپنی مرکزی قیادت کے دیدار کی ایک ایک جھلک کو ترس کر جب تھک جاتے ہیں تو پھر خود ہی اپنی شکایات اور غصے کو اخبارات کے ذریعے نکالتے ہیں۔ مجھے اچھی طرح یاد ہے کہ نوے (90)کی دہائی میں وزیر اعظم پاکستان میاں محمد نواز شریف نے وزیر اعظم ہاؤس اسلام آباد میں ایک بھرپور دعوت کا اہتمام کیا جس میں مجاہد اول سردار محمد عبدالقیوم خان صاحب اور اُن کے ساتھیوں کو مدعو کر کے اعلان کیا کہ مجاہد اول آزاد کشمیر کے وزیر اعظم منتخب ہو چکے ہیں، جس کے بعد آئندہ چند روز میں سردار سکند ر حیات خان آزاد کشمیر کے صدر منتخب ہو جائیں گئے، جس کے لئے مَیں انہیں پیشگی مبارک دیتا ہوں۔مسلم کانفرنس کے رہنما کی حیثیت سے عزت و احترام کا وہ مقام اور موجودہ صورت حال کا تقابلی جائزہ بہت تکلیف دہ اور اذیت ناک ہے ۔ سوال سردار سکندرحیات خان کی ذات کا نہیں، بلکہ ریاست کے ایک بڑے سیاسی رہنما کے مقام اور مرتبے کے احترام کا ہے ۔ وقت اس بات کا تقاضا کرتا ہے کہ آزاد کشمیر ہو یا گلگت، بلتستان ریاست کے غیور لوگوں کو حکومتی بیساکھیوں سے آزاد کیا جائے۔ اقتدار کی سیاست نے بڑے بڑے لوگوں کو بہت بے آبرو کر دیا ہے ۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ لوگ دوسروں اور اپنے تجربات سے مزید وقت ضائع کئے بغیر سبق حاصل کریں اور اپنے سیاسی کندھے اسلام آباد میں بننے والی ہر حکومت کو اتنی کم قیمت پر، بلکہ اُدھار پر رضاکارانہ طور پر پیش کرنے سے سختی سے اجتناب کریں ۔ رہی بات نظریاتی سیاست کی تو آزاد کشمیر میں الحا ق پاکستان اور خود مختار کشمیر کے علاوہ ، بھٹو ازم کا محدود سا نظریاتی ووٹ اگرچہ ضرور موجود ہے،تاہم وہ بھی ہر دور میں مرکزی حکومت کی بیساکھیوں کا محتاج ہے، ورنہ باقی لوگوں کو تو اعلان کرنا چاہئے کہ وہ آزاد کشمیر کی آئندہ انتخابی سیاست بھی سیاسی بھگوڑوں کی بنیاد پر ہی کیا کریں گے، کیونکہ وہ کسی بھی سیاسی کارکن کو اپنی جماعت /سیاسی طاقت کی بنیاد پر تو انتخابات جتوانہیں سکتے۔ مسلم کانفرنس نے گزشتہ کئی دہائیوں سے آزاد کشمیر کو ساری ریاست جموں و کشمیر کے لئے نظریاتی بیس کیمپ بنا رکھا ہے۔ کیا غیر ریاستی سیاسی یلغار کا مقصد لوگوں کی قیمتیں مقرر کرنا ہے۔ تعمیر و ترقی اور ملازمتیں بنیاد ہوں تو مقبوضہ کشمیر کی تمام نشستیں بی جے پی نے جیت لی ہوتیں۔ سلام ہے ہندوستان کے پنجہ استبداد میں جکڑے ہوئے غیرت مند کشمیریوں کو، جنہوں نے اپنے ہر دور کی سازشوں سے اپنے تشخص کو بچا کر رکھا ہے۔ تعمیر و ترقی ، پیسہ اور میڈیا کو ہی بنیاد بننا ہوتا تو سابقہ سوویت یونین ، عراق، لیبیا، شام اور یمن کو یہ دن کبھی نہ دیکھنے پڑتے۔ مقبوضہ کشمیر کے غیور عوام نے خرید و فروخت کو مسترد کر دیا ہے۔ ہندوستانی جبر کو مسترد کر دیا ہے ۔ تعمیر و ترقی کو رد کر دیا ہے اور عہد کر لیا ہے کہ وہ اپنے تشخص پر کوئی سمجھوتہ نہیں کریں گے۔ کیا ہم تاریخ کے اس تجزیے سے کوئی سبق سیکھنے کے لئے تیار ہیں یا پھر کمیشن پر ملنے والی کشمیر کونسل کی چند سکیموں کے جھوٹے وعدوں پر خود کشمیریوں کے ہاتھوں کشمیریوں کی غیرت کی نیلامی کا سبب بنتے رہیں گے۔ آزاد کشمیر اور گلگت بلتستان کو کمزور کرنا ہمیشہ سے ہندوستان کی دلی خواہش رہی ہے، جبکہ قائداعظمؒ کا رویہ، سوچ، عمل اور اقدامات نے کشمیریوں کو اتحاد کے راستے پر ڈال کر پاکستان کے ساتھ فطری تعلق میں مزید شدت اورقوت فراہم کی۔پاکستان کے بعض عاقبت نا اندیش سیاست دان جموں و کشمیر کی قیمت پر ہندوستان کو خوش کر کے اس کے ساتھ کاروبار کرنا چاہتے ہیں، جبکہ کشمیری عوام اپنی جان ، مال، عزت، آبرو سب داؤ پر لگا کر پاکستان کے ساتھ اپنے قدرتی او رفطری تعلق پر کامیاب پہرہ داری کر کے خوش رہنا چاہتے ہیں۔

مزید : کالم