دبئی میں وائی فائی کے بجائے لائی فائی انٹرنیٹ سروس متعارف

دبئی میں وائی فائی کے بجائے لائی فائی انٹرنیٹ سروس متعارف

دبئی (اے پی پی) دبئی کی شاہراؤں پر نصب سٹریٹ لائیٹس سے روشنی کے علاوہ اب لائی فائی ٹیکنالوجی بھی فراہم کی جائے گی جس کے ذریعے روشنی کے توسط سے مواصلاتی رابطے کی سہولت فراہم کی جائے گی۔عرب ذرائع ابلاغ کے مطابق رواں برس کے اختتام تک دبئی لائی فائی ٹیکنالوجی کے ذریعے مواصلاتی رابطے کی سہولت فراہم کرنے والا دنیا کا پہلا شہر بن جائے گا۔لائی فائی یعنی’’ لائٹ فیڈیلٹی‘‘ ایک ایسا جدید طریقہ ٹیکنالوجی ہے جس میں آپٹیکل یعنی روشنی کی فریکیونسی کو وائی فائی ‘ جیسی ریڈیو لہروں کی منتقلی کے لئے استعمال کیا جا سکتا ہے۔ اس فنی عمل میں کمپیوٹر چپ کو لائٹ میں نصب کر دیا جاتا ہے جس کی مدد سے ڈیٹا کو آپیٹکل فریکیونسی کے ذریعے منتقل کرنا ممکن ہو جاتا ہے۔

اسے سے استفادے کا خواہش مند فرد لائیٹ آپٹیکل سینسر ڈیوائس کے نیچے کھڑا ہو جاتا ہے جہاں سے اس کے لیپ ٹاپ یا دیگر گیجٹس میں انٹرنیٹ سروس فراہم ہونا شروع ہو جاتی ہے۔ لائی فائی کا استعمال وائی فائی کے مقابلے میں زیادہ محفوظ ہے کیونکہ اس میں مواصلاتی مواد کی ترسیل ایتھر کے ذریعے نہیں ہوتی۔ لائی فائی کی لہروں کو ایک ہال یا مخصوص سائز روشنی کے دائرے تک محدود کیا جا سکتا ہے جبکہ یہ سہولت وائی فائی کی موجودہ ٹیکنالوجی میں موجود نہیں ہے۔نیز لائی فائی کی سپیڈ وائی فائی کے مقابلے میں کئی گنا زیادہ ہے۔ اس کی مدد سے انٹرنیٹ سے کوئی بھی فلم نہایت تیزی سے ڈاؤن لوڈ کی جا سکتی ہے۔ لائی فائی کی سپیڈ 224 گیگا بائیٹ فی سیکنڈ بتائی جاتی ہے۔

مزید : کامرس