لیف مائز کیڑا کے حملہ سے بچاکر پیداوار میں 40فیصد اضافہ کرسکتے ہیں،زرعی ماہرین

لیف مائز کیڑا کے حملہ سے بچاکر پیداوار میں 40فیصد اضافہ کرسکتے ہیں،زرعی ...

  

لاہور(اے پی پی )باغبان ترشاوہ باغات کو لیف مائز کیڑا کے حملہ سے بچاکر پیداوار میں 40فیصد اضافہ کرسکتے ہیں اور پھلوں کا معیار بھی بہتر ہوگا ۔زرعی ماہرین کے مطابق لیف مائزکیڑا موسم بہارمیں جب نئے پھول اور پھل لگتے ہیں اس وقت حملہ آور ہو کر ترشاوہ پھلوں کی بیرونی جلد کو تباہ کر دیتا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ لیف مائنرکینو، مالٹا، سنگترا، لیموں ، کھٹی اورگریپ فروٹ کے پودوں کے نرم اور نئے پتوں میں سرنگ بنا کر اپنی خوراک حاصل کرتاہے اورلیف مائنر کی دوسری قسم نرم تنے اورپھل کے چھلکے میں بھی سرنگ بنا لیتی ہے۔

اسی طرح سٹرس تھرپس بھی ترشاوہ باغات کے پھل کو نقصان پہنچانے والا ایک انتہائی خطرناک کیڑا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ لیف مائنر کی چارحالتیں انڈہ ،سنڈی ،کویا اور بالغل اوریہ موسم خزاں اور بہار میں مادہ تھرپس نئی پھوٹ اور پھل پر 25کے قریب انڈے دیتی ہے اور ان انڈوں سے مارچ اور اپریل میں نئی پھوٹ پربچے نکلتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ تھرپس پھل کی بیرونی جلد کو نقصان پہنچاتا ہے کیونکہ یہ براہ راست پھول کی پتیوں کے نیچے بننے والے چھوٹے پھل پر حملہ کرتا ہے اسی طر ح ترشاوہ باغات میں تھرپس کا حملہ نوٹ کرنے کیلئے موسم بہار میں 6 سے 8 ہفتے تک باغات کا باقاعدگی سے معائنہ جاری رکھا جائے اور یہ عمل ہفتہ میں دودفعہ کیا جائے۔ انہوں نے کہاکہ صرف ان باغات پر سپرے کیا جائے جن میں نئے پودوں اور پتوں کی تعداد ز یادہ ہو اورتیزی سے بڑھوتری کرنے والی ترشاوہ پھلوں کے درختوں کی غیر ضروری شاخوں کو ختم کریں تاکہ حملہ کے نقصا نا ت سے بچ سکیں۔

مزید :

کامرس -