اداروں کی نجکاری، سرکاری ملازمین کا احتجاجی تحریک چلانے کا اعلان

اداروں کی نجکاری، سرکاری ملازمین کا احتجاجی تحریک چلانے کا اعلان

لاہور (نامہ نگار) ملک بھر کے سرکاری ملازمین نے سرکاری اداروں کی نجکاری، ٹیکنیکل اور نان ٹیکنیکل ملازمین کے پے سکیلوں کی اپ گریڈیشن سمیت دیگر مطالبات کیلئے ملک گیر احتجاجی تحریک چلانے کا اعلان کردیا ہے جس میں حکومت کو 25 اپریل تک مطالبات کی منظوری کیلئے ڈیڈ لائن دی گئی ہے اور 26 اپریل سے ملک گیر احتجاجی تحریک چلانے کا اعلان کردیا ہے۔ اس حوالے سے ایپکا کے مرکزی صدر محمد اسلم خان، ایپکا کے صوبائی صدر حاجی محمد ارشاد،جنرل سیکرٹری لاہور ڈویژن محمد ابوہریرہ، لالہ اسلم اور غلام مصطفی سمیت رانا محمد اشرف نے گزشتہ روز صحافیوں کو بتایا کہ حکومت نے مہنگائی کے تناسب سے تنخواہوں میں تاحال اضافہ نہیں کیا ہے۔ سال 2010ء میں تمام ایڈہاک ریلیف کو ختم کرکے سکیلوں کو ریوائز کرکے تنخواہوں میں مہنگائی کے تناسب سے اضافہ کرنے کا اعلان کیا گیا تھا۔ اس کی وفاتی حکومت نے اپنے بجٹ کے دوران بھی منظوری دی لیکن تاحال ملک بھر کے ملازمین کی تنخواہوں میں مہنگائی کے تناسب سے اضافہ نہیں کیا گیا ہے۔ اس طرح ہاؤس رینٹ میں 50 فیصد اور پنشن کی شرح میں 50 فیصد جبکہ گروپ انشورنس کی رقم اور ٹیکنیکل اور نان ٹیکنیکل ملازمین کے پے سکیلوں کی اپ گریڈیشن سمیت سرکاری اداروں کی نجکاری کے خلاف فیصلہ کیا گیا ہے کہ 26 اپریل سے ملک گیر احتجاجی تحریک چلائی جائے گی جس میں 26 اپریل کو لاہور میں پنجاب اسمبلی کے سامنے احتجاجی مظاہرہ جبکہ صوبہ بھر کے ڈی سی اوز اور کمشنرز کے دفاتر کے سامنے احتجاجی مظاہرے کئے جائیں گے۔ اسی طرح ملک کے دیگر صوبوں میں بھی صوبائی اسمبلیوں کے سامنے احتجاجی مظاہرے کئے جائیں گے جبکہ وفاق میں پارلیمینٹ ہاؤس کے سامنے ملازمین احتجاجی دھرنا دیں گے۔

مزید : صفحہ آخر