متحدہ سے عوام اور کارکنان مایوس ہوچکے ہیں، شبیرقائمی

متحدہ سے عوام اور کارکنان مایوس ہوچکے ہیں، شبیرقائمی

کراچی(اسٹاف رپورٹر )متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے سابق رہنما شبیرقائم خانی نے کہا ہے کہ پارٹی کی موجودہ صورتحال سے صرف ہم ہی نہیں کارکنان اور قوم بھی مایوس ہیں، لاکھ کوشش کے باوجود معاملات حل نہیں ہورہے ہیں،ایسی نوبت آگئی تھی کہ پارٹی چھوڑنے پر مجبور ہوا۔مجھ سے کئی لوگ رابطے میں ہیں کہ ہم بھی پی ایس پی میں جانا چاہتے ہیں۔میڈیا سے بات چیت میں شبیرقائم خانی نے کہاکہ دونوں گروپوں کی جانب سے ہونے والی محاذ آرائی سے صرف ہم ہی نہیں ہزاروں کارکنان اور قوم بھی مایوس ہیں، مسائل کو حل کرنے کیلئے جوڑنے کی کوشش کی گئی لیکن معاملات حل نہیں ہورہے۔انہوں نے کہا کہ ہم اپنی پارٹی کے معاملات حل نہیں کر پارہے تھے لوگوں کے مسائل کیا حل کرتے، ایم کیو ایم کو سوچنا چاہیئے کہ ان کا قریبی ساتھی اور دیگر لوگ کیوں چھوڑ کر جارہے ہیں؟۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ کامران ٹیسوری بھی ایک وجہ ہوں گے لیکن اور بھی کئی وجوہات ہیں، اس جھگڑے کو دو ماہ گزر گئے لیکن اب تک کچھ نہیں ہوا، بڑے سے بڑے مسئلے بھی حل ہوسکتے ہیں تو یہ کیوں نہیں؟۔شبیرقائمخانی نے کہاکہ فاروق ستار سے میں نے کہا کہ اس مسئلے کو حل کریں تو ان کا کہنا تھا کہ میں نے پوری کوشش کی، مل بیٹھ کرمسئلہ حل کرنا چاہئے، لیکن مجھے وہ بے بس نظر آئے۔پیپلز پارٹی میں شامل نہ ہونے کی وجہ بتاتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پیپلزپارٹی نے سندھ کے شہروں کیلئے کچھ نہیں کیا، پیپلزپارٹی نے آبائی علاقوں کو بھی کھنڈر بنا دیا۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر