شہباز شریف کی اہلیہ اور صاحبزادیوں کی طلبی کے نوٹس منسوخ، سوالنامے بھجوانے کا فیصلہ

شہباز شریف کی اہلیہ اور صاحبزادیوں کی طلبی کے نوٹس منسوخ، سوالنامے بھجوانے ...

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک،آئی این پی) چیئرمین نیب جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال نے شہباز شریف کی اہلیہ اور دونوں صاحبزادیوں کی نیب طلبی کے نوٹس منسوخ کرتے ہوئے شریف فیملی کی خواتین کو سوالنامے ارسال کرنے کی ہدایت کی ہے۔قومی احتساب بیورو (نیب) کے چیئرمین جسٹس (ر) جاوید اقبال نے گزشتہ روز لاہور بیورو کا دورہ کیا اور جاری انکوائریز پر پیش رفت کا جائزہ لیا، ڈائریکٹر جنرل لاہور کی جانب سے میگاکرپشن مقدمات بالخصوص شریف فیملی‘عبد العلیم خان سمیت دیگر کیسز پر جامع بریفنگ دی گئی۔نیب کی جانب سے جاری اعلامیہ کے مطابق جسٹس (ر) جاوید اقبال کو ڈی جی نیب لاہور نے شریف فیملی کے کیسز پر بریفنگ دی۔اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ چیئرمین نیب نے شہبازشریف کی اہلیہ نصرت شہباز اور صاحبزادیوں، رابعہ عمران، جویریہ علی کو نیب کی جانب سے بھیجے گئے طلبی کے نوٹس منسوخ کردئیے جبکہ چیئرمین نے شریف فیملی کی خواتین کو متعلقہ کیس کے حوالے سے مطلوب معلومات کیلئے سوالنامہ بھیجنے کی ہدایت کی ہے، سوالنامہ آمدن سے زائد اثاثے اور مبینہ منی لانڈرنگ کیس سے متعلق ہوں گے۔اعلامیہ کے مطابق شریف فیملی کے تمام کیسز کی براہ راست نگرانی چیئرمین نیب خود کریں گے۔اعلامیے کے مطابق چیئرمین نیب نے کہا ہے کہ نیب ’احتساب سب کیلئے‘ کی پالیسی پر سختی سے گامزن ہے، نیب کی کسی سیاسی جماعت سے وابستگی نہیں، نیب ایک خودمختار ادارہ ہے اور کسی بھی دباؤ کو بالائے طاق رکھتے ہوئے قانون اور آئین پاکستان کو مد نظر رکھتے ہوئے اپنے اقدامات سرانجام دیتا ہے، نیب کی وابستگی صرف اور صرف ریاستِ پاکستان سے ہے۔جسٹس (ر) جاوید اقبال کا کہنا تھا کہ نیب کی نظر میں تمام ملزمان برابر ہیں، میگا کرپشن مقدمات کو میرٹ اور صرف میرٹ کی بنیاد پر جلد از جلد منطقی انجام تک پہنچایا جائے گا۔چےئر مین نیب نے کہا ہے کہ خواتین اور چادرچار دیواری کے احترام کو ہر صورت یقینی بنا یا جائیگا مگر جنہوں نے کر پشن کی ہے ان کا احتساب ضرور ہوگا ۔انہوں نے کہا کہ نیب کی وابستگی صرف اور صرف ریاست پاکستان کے ساتھ ہے اور ملک میں شفاف احتساب کو ہر صورت یقینی بنایا جارہا ہے۔

لاہور( این این آئی)پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز نے رمضان شوگر ملز کیلئے نالے کی تعمیر کے کیس میں نیب کے رو برو پیش ہو کر بیان ریکارڈ کروادیا ، آمدن سے زائداثاثہ جات اور منی لانڈرنگ کیس میں آج دوبارہ نیب میں پیش ہوں گے ۔ نیب نے پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز کو گزشتہ روز صبح گیار ہ بجے طلب کر رکھا تھا تاہم وہ اپنی مصروفیات کی وجہ سے تقریباً سوا چار بجے پیش ہوئے ۔ذرائع کے مطابق حمزہ شہباز تقریباً سوا گھنٹہ نیب دفترمیں موجود رہے جہاں تفتیشی ٹیم نے ان سے رمضان شوگر ملز کیلئے نالے کی تعمیر اورجعلی سروے کے حوالے سے سوالات پوچھے۔حمزہ شہباز کی پیشی کے موقع پرلیگی کارکنوں کی بڑی تعداد اظہار یکجہتی کیلئے پہلے سے ہی موجود تھی جنہوں نے حمزہ شہباز کی آمد پر بھرپور انداز میں نعرہ بازی کی ۔ نیب حکام نے عطا ء اللہ تارڑ کواندر جانے سے روک دیا اور انہیں گاڑی سے نیچے اتار دیا گیا۔ عطاء اللہ تارڑ نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ میرے پاس پاور آف اٹارنی ہے اور میں حمزہ شہباز کا وکیل بھی ہوں لیکن مجھے اندر جانے کی اجازت نہیں دی گئی۔

مزید : صفحہ اول