فار ما سوٹیکل کمپنیوں کے بجائے میڈیکل سٹوروں اور فارمیسیوں پر چھاپے

فار ما سوٹیکل کمپنیوں کے بجائے میڈیکل سٹوروں اور فارمیسیوں پر چھاپے

لاہور (جاوید اقبال)ڈریپ اور صوبائی حکومتوں کے ڈرگ انسپکٹر وں نے ادویات کی قیمتوں میں اضافہ کرنیوالی کمپنیوں کیخلاف کریک ڈاؤن کی سمت تبدیل کر لی ،اربوں روپے کمانے والی فارماسوٹیکل کمپنیوں کے بجائے پرچون میں ادویات فروخت کرنیوالے میڈیکل سٹوروں اور فارمیسیوں کی پکڑ دھکڑ شروع کر دی ہے اور چھاپوں کے دوران کروڑوں روپے کی ادویات میڈیکل سٹوروں سے اٹھا لی گئی ہے جس کیخلاف اور ریٹیلر ایسوسی ایشن اور صوبہ بھر کے کیمسٹوں نے احتجاج کا اعلان کر دیا ہے ۔فارمیسی ایسوسی ایشن نے اس اقدام کو ظالمانہ قرار دیدیا ہے ایسوسی ایشن کے رہنماؤں کا کہنا ہے کہ ڈریپ اور صوبوں کے ڈرگ انسپکٹروں نے اصل مجرموں کے بجائے فارما سوٹیکل کمپنیوں کی 15 فیصد ڈسکاؤنٹ پر ادویات فروخت کرنیوالے میڈیکل سٹوروں سے غیر قانونی طور پر کروڑوں روپے کی ادویات اٹھائی جارہی ہیں وزیراعظم فوری طور پر نوٹس لیتے ہوئے یہ سلسلہ بند کریں ۔میڈیکل سٹور پر چھاپوں کے بجائے کمپنیوں کے مالکان کے خلاف کاروائی کریں توحکومت کا ساتھ دیں گے۔ وزیراعظم عمران خان کو لکھے گئے خط میں کہاگیاہے کہ فارمیسیوں اور میڈیکل سٹورز کی خلاف کارروائیوں کا مقصد مہم کو ختم کرنا ہے اور اربوں روپے مریضوں کے ادویات کی قیمتوں میں اضافے کے نام پر لوٹنے والی کمپنیوں کو تحفظ فراہم کرنا ہے میڈیکل سٹوروں پر چھاپہ مار کر غریبوں کی مہنگی ترین ادویات غیر قانونی طور روزانہ ڈرگ انسپکٹر اٹھا کر لے جاتے ہیں اس سلسلے میں ڈریپ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ڈاکٹر عاصم رؤف سے بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ میں یہ معاملہ علم میں لانے پر روزنامہ پاکستان کا مشکور ہوں ہم میڈیکل سٹوروں کے کسٹوڈین ہیں ان کے میڈیکل سٹوروں سے اٹھائی گئی ایک ایک گولی کی حفاظت کریں گے ۔

ادویہ

مزید : صفحہ اول