پی پی ، (ن) لیگ کا مثبت جواب نہ ملنے پر فضل الرحمن عارضہ قلب میں مبتلا

پی پی ، (ن) لیگ کا مثبت جواب نہ ملنے پر فضل الرحمن عارضہ قلب میں مبتلا

  



لاہور(شہزاد ملک سے) جے یو آئی (ف) کے سر براہ مولانا فضل الرحمن پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) کی جانب سے حکومت مخالف تحریک کو فوری شروع کرنے کے حوالے سے مثبت جواب نہ ملنے کیوجہ سے عارضہ قلب کے مریض ہوگئے ہیں ،علالت کے باعث انہوں نے اپنی تمام تر سیاسی مصروفیات اور ملاقاتوں کو ترک کرکے اسلام آباد میں اپنے گھر پر ہی رہنے کا فیصلہ کیا ہے ۔با خبر ذرائع کے مطابق ایک مرتبہ پھر گزشتہ دنوں مولانا فضل الرحمن نے جاتی امراء میں نواز شریف سے ملاقات کی اور ان سے انکی صحت کے بارے میں دریافت کرنے کے علاوہ حکومت مخالف تحریک شروع کرنے کے حوالے سے بھی بات چیت کی لیکن نواز شریف نے فی الحال کسی بھی سیاسی سرگرمی کے حوالے سے انکے ساتھ کوئی بات چیت نہ کی اور اپنی بیماری کے حوالے سے ہی ان سے تبادلہ خیال کیا ۔ذرائع کے مطابق مولانا فضل الرحمن چاہتے تھے کہ نواز شریف اس ملاقات میں ان سے حکومت مخالف تحریک شروع کرنے کے حوالے سے کوئی معاملات کو حتمی شکل دینے کیلئے اپنی پارٹی کی کوئی کمیٹی تشکیل د یدیتے لیکن نواز شریف کی جانب سے سیاسی معاملات پر زیادہ سر گرمی نہ دکھانے پر وہ مایوس ہو گئے ۔ذرائع کے مطابق اسی طرح سے مولانا فضل الرحمن نے پیپلز پارٹی کے سر براہ آصف علی زرداری سے ملاقات کی تو انہوں نے بھی فوری طور پر حکومت کے خلاف تحریک چلانے پر آمادگی کا اظہار نہیں کیا اور ان سے کہا کہ ابھی حکومت کو مزید اور غلطیاں کر لینے دیں اور عوام کے اندر حکومت کیخلاف مزید لاوا پک لینے دیں جب عوام مہنگائی سے تنگ آجائینگے اور حکومت کیخلاف کھل کر آنے کیلئے ہم سے رجوع کرینگے تب ہمیں تحریک شروع کرنی چاہئے اور فی الحال ہمیں حکومت کو تحریک شروع کرکے سیاسی شہید ہونے کا موقع دینے سے گریز کرنا چاہئے اسی میں ہم سب کی بھی سیاسی بہتری ہے ۔ذرائع کے مطابق اپوزیشن کی دونوں بڑی سیاسی جماعتوں کی جانب سے مثبت جواب نہ ملنے کی وجہ سے مولانا فضل الرحمن سیاسی سر گرمیاں چھوڑ کر گھر بیٹھ گئے ہیں اور اس وقت انکی دل کی بیماری بھی بڑھ گئی ہے جسکی وجہ سے ڈاکٹروں نے انہیں مکمل آرام کا مشورہ دیدیا ہے ۔

مولانافضل الرحمن

مزید : صفحہ اول


loading...