چارسدہ میں دوست نے لالچ کی خاطر دوست کا خون کر دیا ، قاتل ساتھی سمیت گرفتار

چارسدہ میں دوست نے لالچ کی خاطر دوست کا خون کر دیا ، قاتل ساتھی سمیت گرفتار

چارسدہ(بیورورپورٹ) ڈھائی لاکھ روپے کی لالچ میں دوست نے دوست کو بے دردی سے قتل کر دیا ۔ ملزم ساتھی سمیت گرفتار ۔ مقتول کے سات معصوم بچوں ،والدہ ،بیوہ اور دیگر لواحقین نے ملزمان کو پھانسی پر لٹکانے کا مطالبہ کردیا ۔تفصیلات کے مطابق تین دن پہلے تھانہ خان ماہی کے حدود میں قتل ہونے والے دین محمد ولد صالح محمد کی والدہ ،بیوہ،سات معصوم بچوں اور مقتول کے چچا اور چچا زاد بھائیوں نے میڈیا کے توسط سے وزیر اعظم عمران خان ،چیف جسٹس آ ف پاکستان آصف سعید کھوسہ،وزیر اعلیٰ محمو دخان اور آئی جی خیبر پختون خوا سے مطالبہ کیا ہے کہ مقتول دین محمد کو ان کے دوست سیف اللہ نے قریبی رشتہ دار قاسم کے ساتھ ملکر قتل کیا اور ان سے ڈھائی لاکھ روپے چھین لئے ۔ انہوں نے کہا کہ ملزم سیف اللہ کو مقتول کے پاس موجود ڈھائی لاکھ روپے کا علم تھا اور مذکورہ رقم چھینے کے لئے انہوں نے مقتول دین محمد کو شام کے وقت فون پر بلایااور کھیتوں میں لے جاکر چھریوں کے پے در پے وار کرکے زخمی کر دیا جس کے بعد سفاک ملزمان نے مجروح دین محمد پر فائرنگ کرکے قتل کر دیا اور ان کے جیب میں پڑے ڈھائی لاکھ روپے نکال کر لے گئے ۔ انہوں نے کہا کہ مقتول کی نعش ساری رات کھیتوں میں پڑی رہی اور صبح اطلاع مل کر ہم نے نعش پوسٹ مارٹم کے لئے ہسپتال منتقل کر دیا ۔ انہوں نے چارسدہ پولیس کو حراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ پولیس نے 24گھنٹے کے اندر ملزمان کو گرفتار کر لیا ہے مگر اب بااثر لوگ قتل کو دوسرا رنگ دے کر ملزمان کو چھڑانے کی کوشش کر رہے ہیں ۔مقتول کی بیوہ اور والدہ نے زار و قطار رو کر کہا کہ ہم غریب لوگ ہیں اور سات بچوں کی کفالت بھی ہمارے لئے بہت مشکل ہے ۔ اس موقع پر بچوں نے زار و قطار رو تے ہوئے کہا کہ ہمیں اپنا والد واپس دے دیں یا ملزما ن کو بھی وہاں بھیج دے جہاں ہمارے والد کو بھیجا گیا ہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر