سابق ڈسٹرکٹ فوڈکنٹرولر بہاولپور نے تحقیقاتی ٹیم کو 70لاکھ میں ’’خرید ‘ ‘ لیا

سابق ڈسٹرکٹ فوڈکنٹرولر بہاولپور نے تحقیقاتی ٹیم کو 70لاکھ میں ’’خرید ‘ ‘ ...

ملتان ( سپیشل رپورٹر) سابق ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولر بہاولپور تنویر نصرت وڑائچ کے کروڑوں روپے کی ناجائز اثاثوں کے خلاف انوسٹی گیشن کرنے والی ٹیم پر ستر لاکھ روپے رشوت وصولی کا (بقیہ نمبر15صفحہ12پر )

انکشاف ہوا ہے۔ایڈیشنل ڈائریکٹر سٹاف نیب احمد ممتاز باجوہ کیس آفیسر ڈپٹی ڈائریکٹر محمد شاہد اور انوسٹی گیشن آفیسر علی ارسلان حیدر نے اپنے مبینہ ٹاؤٹ کے ذریعہ ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولر تنویر نصرت وڑائچ کے خلاف انوسٹی گیشن ڈارپ کرنے کی یقین دہائی کرائی جس کے بعد ستر لاکھ روپے میں معاملات طے پا گئے لیکن کیس انوسٹی گیشن ٹیم تبدیلی نے نیب کے نام پر ہونے والی ڈیل کو بے نقاب کر دیا رشوت وصولی کا پول کھلنے کے بعد پرانی انوسٹی گیشن ٹیم جس نے ٹاؤٹ کے ذریعہ ستر لاکھ وصول کئے اس چینل کے ذریعہ رشوت کی رقم واپس کردی جس کے بعد چیئرمین نیب نے ٹاؤٹ کے ذریعہ ستر لاکھ روپے لینے والی ٹیم کے خلاف انکوائری کا حکم جاری کر دیا انکوائری ٹیم کے فعال ہوتے ہی تینوں آفیسران کا مبینہ ٹاؤٹ اچانک غائب ہو گیا ہے معلوم ہوا ہے اسٹنٹ فوڈ کنٹرولر بہاولپور چوہدری اسلم نے دسمبر 2016میں ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولر بہاولپور تنویر نصرت وڑائچ کے خلاف نیب ملتان بیورو میں دی گئی درخواست میں الزام عائد کیا کہ تنویر نصرت وڑائچ نے سرکاری اختیارات کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے کروڑوں روپے کے ناجائز اثاثے بنائے ہیں جس پر نیب ملتان بیور نے باقاعدہ انکوائری کے بعد انوسٹی گیشن شروع کر دیں اس دوران نیب ملتان کی انوسٹی گیشن ٹیم جو کہ کییس آفیسر ڈپٹی ڈائریکٹر محمد شاہد اور انوسٹیگیشن آفیسر علی ارسلان حیدر پر مشتمل تھی اس ٹیم نے ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرول تنویر نصرت وڑائچ کے والد چوہدری نصرت والدہ غلام سکینہ تین بیویوں منزہ ریحانہ، یاسمین اختر اور فرحت تنویر چار بھائیوں ضمیر نصرت شبیر نصرت منیر نصرت فرخ نصرت تین بیٹوں تیمور وقاص دانیال تنویر محمد طلال تنویر پانچ بیٹیوں حرا نصرت فاخرہ تنویر رابیل تنویر بختاور تنویر اور ابھیہ تنویر کے اثاثوں کی تفصیلات اکٹھی کر لیں اسی دوران اس ٹیم کا ایک مبینہ ٹاؤٹ ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولر کے بھائی کو ملا اور انوسٹی گیشن ڈراپ کرانے کے لیے تعاون کی پیشکش کی اس ٹاؤٹ نے اپنے واٹس ایپ نمبر سے نیب ملتان کے ایک آفیسر سے بھی بات کرائی جس نے ملزم کے بھائی کو ڈیل کے لیے گرین سگنل بھی دے دیا جس کے بعد ستر لاکھ روپے میں معاملات طے پا گئے بتایا گیا ہے ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولر کے بھائی نے نیب کے ایک آفیسر سے براہ راست بھی اس ڈیل کے حوالے سے ملاقات کی جب تمام معاملات فائنل ہوگئے تو ڈپٹی ڈائریکٹر اور کیس آفیسر محمد شاہد اور انوسٹی گیشن آفیسر علی ارسلان حیدر نے ریجنل بورڈ میٹنگ کو ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولر کی انوسٹی گیشن ڈارپ کرنے کی سفارشات پیش کیں لیکن اس مٹینگ میں تمام گیم الٹ گئی جس بورڈ پر نے نئی ٹیم تشکیل دی جس میں سابق ایڈیشنل ڈائریکٹر الیاس قمر کو کیس آفیسر اور علیم لیاقت کو انوسٹی گیشن آفیسر نامزد کیا جس کے بعد اس کیس نے نئی کروٹ لی جس کے نتیجے میں نہ صرف ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولز تنویر نصرت وڑائچ گرفتار ہوگئے بلکہ ڈپٹی ڈائریکٹر و کیس آفیسر محمد شاہد اور انوسٹی گیشن آفیسرعلی ارسلان حیدر کے رشوت لینے کیراز بھی طشت از بام کر دیا اس موقع پر ملزم کے بھائی آپے سے باہر ہوگئے معلوم ہوا ہے ملزم کے ایک بھائی نے نئی انوسٹی گیشن ٹیم سے ملاقات کی اور اسے تمام ڈیل کے بارے میں آگاہ کیا کیس آفیسر نے نہایت چالاکی سے ملزم کی بھائی کا بیان ریکارڈ کرلیا۔اور خفیہ طور پر تمام ڈیل کے بارے میں نیب ہیڈ کوارٹر کو آگاہ کر دیا اس موقع پر حالات کی سنگینی محسوس کرتے ہوئے ایڈیشنل ڈائریکٹر سٹاف نیب احمد ممتاز باجوہ کیس آفیسر ڈپٹی ڈائریکٹر محمد شاہد اور علی ارسلان حیدر نے رشوت میں لئے گئے ستر لاکھ روپے ملزم کے بھائی کر دیئے دلچسپ امر یہ ستر لاکھ جس چینل سے آئے تھے اسی چینل سے واپس چلے گئے اس طرح رشوت کی واپسی میں ایمانداری کی ایک نئی مثال قائم ہوگئی لیکن اس سارے پراسس کو دیر ہوچکی تھی کیونکہ ایڈیشنل ڈائریکٹر الیاس قمر کے دیئے ہوئے کلیو پر نیب انٹیلی جنس حرکت میں اچکی تھی اور لیکن مبینہ ٹارگٹ ٹاؤٹ بھی منظر سے غائب ہو گیا ہے اور واٹس ایپ نمبر بھی بند ہے انٹیلی جنس ٹیم نے ملزم ڈسٹرکٹ فوڈ کنٹرولر کے بھائی کا بیان بھی قلمبند کر لیا ہے جس نے اپنے جواب میں کہا ہے کام نہ ہونے کی وجہ سے ہمارے ستر لاکھ واپس مل گئے ہیں لیکن نیب ٹیم تا حال ٹاؤٹ کی تلاش میں سر گرداں ہے بتایا گیا فرنٹ مین کا کھرا سرگودھا تک پہنچ کے ختم ہو چکا ہے۔اس حوالے سے ترجمان قومی احتساب بیورو پاکستان نوازش عاصم نے کہا کہ ہمیں ستر لاکھ روپے رشوت وصول ہونے کی شکایت ملی ہے جس ہر ادارے نے چھان بین کا عمل شروع کیا ہو ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر