بھارتی جیلوں میں قید کشمیری رہنماؤں کی زندگیاں شدید خطرے میں ہیں: حریت کانفرنس

بھارتی جیلوں میں قید کشمیری رہنماؤں کی زندگیاں شدید خطرے میں ہیں: حریت ...

  

سرینگر(مانیٹرنگ ڈیسک،این این آئی) مقبوضہ کشمیر میں کل جماعتی حریت کانفرنس نے کہا ہے کہ کورونا وائرس کی وبا کے پیش نظر غیر قانونی طورپر نظر بند کشمیری حریت رہنماؤں کی زندگیوں کو شدید خطرہ لاحق ہے۔کشمیر میڈیاسروس کے مطابق حریت کانفرنس کے ترجمان نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہاہے کہ قابض انتظامیہ کی طرف سے کشمیری نظربندوں کی رہائی کا اعلان صرف ایک فریب ہے۔ انہوں نے افسوس ظاہر کیاکہ بعض حریت کارکنوں کورہا کیاگیا ہے جبکہ سینئر حریت رہنماء محمد یاسین ملک، شبیر احمد شاہ، میاں عبدالقیوم،الطاف احمد شاہ، ایاز محمد اکبر، پیر سیف اللہ، آسیہ اندرابی، فہمیدہ صوفی اور نعیم احمد خان سمیت ہزاروں کشمیری اب بھی غیر قانونی طورپر نظربند ہیں۔حریت کانفرنس کے ترجمان نے کہاکہ ان نظربند حریت رہنماؤں کو بنیادی انسانی ضروریات کے علاوہ علاج معالجے کی سہولت سے محروم رکھا جارہا ہے۔ انہوں نے کہاکہ انہیں جیلوں میں ایسے حالات میں رکھا گیا ہے کہ وہ آسانی سے کورونا وائرس میں مبتلا ہوسکتے ہیں۔ادھرحریت رہنماء محمد یوسف نقاش نے سرینگر میں ایک میڈیا انٹرویو میں مسلسل لاک ڈاؤن کے باعث کشمیری عوام کی مشکلات میں اضافے پر تشویش ظاہر کی۔ انہوں نے کہاکہ کوروناوائرس کی وبا کے پیش نظر لاک ڈاؤن میں مزید توسیع کے باعث مقبوضہ علاقے کے عوام کو روزمرہ استعمال کی اشیاء اور ادویات کی شدید قلت کا سامنا ہے۔بھارت میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کی روک تھام کے لیے سخت لاک ڈاؤن کی وجہ سے مقبوضہ کشمیر کے 40ہزار سے زائد مزدور بھارت کی مختلف ریاستوں میں پھنسے ہوئے ہیں جنہیں خوراک کی شدید قلت اور سخت مالی مشکلات کا سامنا ہے۔

حریت کانفرنس

مزید :

صفحہ آخر -