احساس پروگرام کے 5لاکھ کی گمشدگی، پولیس نے گرفتار ملزم بھی چھوڑ دیئے

احساس پروگرام کے 5لاکھ کی گمشدگی، پولیس نے گرفتار ملزم بھی چھوڑ دیئے

  

فیصل آباد(کرائم رپورٹر)فیصل آباد پولیس 11اپریل کو حکومت پاکستان کے احساس پروگرام کے تحت ضرورت مندوں کو تقسیم کی جانے والی کرونا امداد میں 5لاکھ روپے کی رقم کی چوری‘گمشدگی یا مجرمانہ غفلت کا پراسرار معمہ حل نہیں کر سکی اور اس سلسلے میں حراست میں لئے گئے لڑکے سمیت متعدد افراد کو چھوڑ دیا گیا اور ایک لاوارث رقم کی طرح ہر متعلقہ ادارے اور متعلقہ ذمہ داران نے اتنے بڑے نقصان کو مقدر سمجھ کر خاموشی اختیار کر لی۔امدادی رقوم کی تقسیم کیلئے حلقہ این اے 109کے کوارڈی نیٹر نے اس سلسلے میں نامعلوم افراد کے خلاف جیب تراشی کے الزام میں مقدمہ بھی درج کرا دیا۔باخبر ذرائع کے مطابق پولیس نے وہ لباس بھی قبضہ میں نہیں لیا جس کی جیب تراشی ہوئی۔ معلوم ہوا ہے کہ پولیس اس نتیجے پر بھی نہیں پہنچ سکی کہ جب جیب تراشی کا واقعہ رونما ہوا تو مدعی کے پاس کل کتنی رقم موجود تھی اور وہ کس کس جیب میں رکھی ہوئی تھی۔ یہ بھی معلوم نہیں ہوسکا کہ اس سنگین واقعہ کی متعلقہ ایم این اے نے اپنے طور پر کوئی تحقیق و تفتیش کی یا نہیں اور وہ کسی نتیجے پر بھی پہنچے یانہیں۔ پانچ لاکھ روپے کی یہ رقم 12ہزار روپے فی کس کے حساب سے تقریباً 42ضرورت مندوں میں تقسیم ہونا تھی۔ ضلعی انتظامیہ اور حکومت پنجاب کے دیگر ذمہ داران نے اتنی بڑی رقم کے بارے میں کیا سنجیدہ تحقیقی اقدامات کئے اس کی تفصیل بھی ابھی تک سامنے نہیں آئی۔ متعدد حساس محب وطن شہری یہ مطالبہ کر رہے ہیں کہ اس واقعہ کی جوڈیشل انکوائری سیشن جج فیصل آباد کی نگرانی میں کروائی جائے جس میں ہر متعلقہ شخص کو شامل انکوائری کر کے نتائج منظر عام پرلائے جائیں۔

پانچ لاکھ گمشدگی

مزید :

صفحہ آخر -